Urdu poets and writers of Allahabad by Muslim Saleem

directory shifted to

http://khojkhabarnews.com/2016/06/13/urdu-poets-and-writers-of-allahabad-by-muslim-saleem/

Advertisements

About Muslim Saleem

Muslim Saleem (born 1950) is a great Urdu poet, writer and journalist and creator of massive directories of Urdu poets and writers on different blogs. These directories include 1. Urdu poets and writers of India part-1 2. . Urdu poets and writers of India part-II 3. Urdu poets and writers of World part-I 4. Urdu poets and writers of World part-II, 5. Urdu poets and writers of Madhya Pradesh, 6. Urdu poets and writers of Allahabad, 7. Urdu poets and writers of Shajahanpur, 8. Urdu poets and writers of Jammu-Kashmir and Kashmiri Origin, 9. Urdu poets and writers of Hyderabad, 10. Urdu poets and writers of Augrangabad, 11. Urdu poets and writers of Maharashtra 12. Urdu poets and writers of Tamil Nadu, 13, Urdu poets and writers of Karnataka 14. Urdu poets and writers of Gujarat, 15. Urdu poets and writers of Uttar Pradesh, 16. Urdu poets and writers of Canada, 17. Urdu poets and writers of Burhanpur, 18. Urdu poets and writers of West Bengal 19. Female Urdu poets and writers, 20. Hindu Naatgo Shuara etc. These directories can be seen on :- 1. www.khojkhabarnews.com 2, www.muslimsaleem.wordpress.com 3. www.urdunewsblog.wordpress.com, 4. www.khojkhabarnews.wordpress.com. 5. www.poetswritersofurdu.blogspot.in 6 www.muslimsaleem.blogspot.in 7. www.saleemwahid.blogspot.in (Life) Muslim Saleem was born in 1950 at Shahabad, Hardoi, Uttar Pradesh in India, brought up in Aligarh, and educated at Aligarh Muslim University. He is the son of the well-known Urdu poet Saleem Wahid Saleem. He has lived in Bhopal, India since 1979. (Education): Muslim Saleem studied right from class 1 to BA honours in AMU schools and University. He completed his primary education from AMU Primary School, Qazi Para Aligarh (Now converted into a girls school of AMU). He passed high school exam from AMU City School, Aligarh and B.A. Hons (Political Science) from Aligarh Muslim University Aligarh. Later, Muslim Saleem did M.A. in Arabic from Allahabad University during his stay in Allahabad. (Career) Muslim Saleem began his career as a journalist in the Urdu-language newspaper Aftab-e-Jadeed, Bhopal. He is multilingual journalist having worked on top posts with Dainik Bhaskar (Hindi), Central Chronicle (English), National Mail (English), News Express (English) and most recently as the chief copy editor of the Hindustan Times in Bhopal. At present, Muslim Saleem is English news advisor to Directorate of Public Relations, Government of Madhya Pradesh. (as on December 1, 2012). (Works and awards) Muslim Saleem has been appointed as Patron of Indo-Kuwait Friendship Society. He is the author of Aamad Aamad, a compilation of his poetry published by Madhya Pradesh Urdu Academi. Several of his couplets are well known in the Urdu language. He won the Yaad-e-Basit Tarhi Mushaira, a poetry competition, in 1982. In 1971, Muslim Saleem was awarded by Ismat Chughtai for his Afsana “Nangi Sadak Par” at AMU Aligarh. His ghazals and short stories have been published in Urdu-language publications Shair, Ahang, Asri, Adab, Agai, Naya Daur, Sada-e-Urdu, Nadeem and other periodicals and magazines. His work in service of the Urdu language was recognized in a special 2011 edition of the periodical Abadi Kiran, devoted to his work. Evenings in his honour have been organised in a number of cities. Muslim Saleem is currently compiling a massive database of poets and writers of the Urdu language, both historic and currently active. (Translation of Muslim Saleem’s work in English): Great scholar Dr. Shehzad Rizvi based in Washington has translated Muslim Saleem’s ghazal in English even though they have never met. Dr. Rizvi saw Muslim Saleem’s ghazals on websites and was so moved that he decided to translate them. (Praise by poets and writers) Great poet and scholar of Urdu and Persian Dr. Ahmad Ali Barqi Azmi has also written a number of poetic tributes to Muslim Saleem. Dr. Azmi and Muslim Saleem are yet to meet face to face. Beside this, great short-story writer and critic Mehdi Jafar (Allahabad, Bashir Badr (Bhopal), Jafar Askari (Lucknow), Prof. Noorul Husnain (Aurangabad), Kazim Jaffrey (Lahore) and a host of others have written in-depth articles defining Muslim Saleem’s poetry. (Muslim Saleem on other websites) Muslim Saleem’s life and works have been mentioned on Wikipedia, www.urduadab4u.blogspot.in, www.urduyouthforum.org and several other website. In fact, www.urduyouthforum.org has given credit to Muslim Saleem for lifting a number of pictures and entries from Muslim Saleem’s websites and blogs. (Address): Muslim Saleem, 280 Khanugaon, VIP Road, Bhopal-462001 Mobiles: 0 9009217456 0 9893611323 Email: muslimsaleem@rediffmail.com saleemmuslim@yahoo.com Best couplets: Zindagi ki tarah bikhar jaayen…… kyun ham aise jiyen ki mar jaayen kar di meeras waarison ke sipurd…. zindagi kis ke naam mar jaayen rooh ke karb ka kuchh mudaawa no tha doctor neend ki goiyan likh gaya wo dekhne mein ab bhi tanawar darakht hai haalanke waqt khod chuka hai jaden tamam My Facebook url is http://en-gb.facebook.com/pages/Muslim-Saleem/176636315722664#!/pages/Muslim-Saleem/176636315722664?sk=info Other blogs http://urdupoetswriters.blogspot.com/ http://muslimspoetry.blogspot.com/ http://abdulahadfarhan.blogspot.com/ http://ataullahfaizan.blogspot.com/ http://hamaramp.blogspot.com/ http://madhyanews.blogspot.com/ http://cimirror.blogspot.com/
This entry was posted in Urdu poets and writers of Allahabad. Bookmark the permalink.

22 Responses to Urdu poets and writers of Allahabad by Muslim Saleem

  1. Aligarh News says:

    Hello there, I discovered your blog by means of Google even as looking for a similar subject, your site came up, it appears good. I have added to favourites|added to my bookmarks.

  2. Muslimsaleem bhai your blog is a mine of information for those who would like to work on the literary history of Allahabad (often misunderstood as the literary journey of Hindi). Please embellish your blog with more illustrations/instances from the works of the writers mentioned by you. A commendable effort indeed.
    Lalit Joshi
    Professor of History
    University of Allahabad

    • muslimsaleem says:

      Dear Joshi Sb,
      It is very kind of you to have complimented in such a way. In fact, I am doing this all alone. Even the writers and poets covered in my directory have not cooperated in sending their resumes and pictures. Despite all these, I am continuing my efforts. I have also launched the following directories:
      Urdu poets and writers of India

      Urdu poets and writers of world

      Urdu poets and writers of West Bengal

      Urdu poets and writers of Aurangabad

      Urdu poets and writers of Canada

      Urdu poets and writers of Shajahanpur

      Hope you will enjoy by browsing these directories.

      With best wishes

      Muslim Saleem

  3. Thanks again
    Muslim Saleem

  4. zest70pk says:

    بہت خوب جناب والا

    الہ آباد کے مشاہیر ادب میں جناب ابن صفی، عباس حسینی اور شکیل جمالی کے نام دیکھ کر طبیعت باغ باغ ہوئی۔ خاکسار ابن صفی پر ایک محقق کی حیثیت سے جانا جاتا ہے۔ خاکسار کا ابن صفی پر مضمون، خبرنامہ شب خون کے تازہ شمارے میں شمس الرحمان فاروقی صاحب نے شائع کیا ہے۔

    اکرم الہ آبادی کا ذکر پڑھ کر بھی خوشی ہوئی، 21 اکتوبر 1963
    کو لکھے گئے اپنے معرکتہ الارا ناول ڈیڑھ متوالے میں ابن صفی نے اکرم صاحب کا ذکر کیا تھا۔

    آپ نے اکرم الہ آبادی کا سن وفات درج نہیں کی۔ یہ اتفاق سے ان کے فیس بک والے صفحے پر بھی نہیں ملتی۔ گزشتہ دنوں ابن صفی پر اپنی کتاب لکھنے کے دوران میں نے اکرم الہ آبادی صاحب کی صاحبزادی سے رابطہ کیا تھا۔ اکرم صاحب کا انتقال 1990 میں وہاہ تھا۔

    ایک عرض یہ بھی ہے کہ تذکرہ مشاہیر الہ آباد میں پروفیسر مجاور حسین رضوی المعروف ابن سعید کا نام نہیں ہے۔ پروفیسر صاحب، ابن صفی کے بے تکلف دوستوں میں سے ہیں اور ماشاء حیات ہیں۔ خاکسار کا ان سے رابطہ رہتا ہے۔

    آخر میں ایک گزارش۔ ملا رموزی کی جائے وفات کی تلاش کراچی کے ایک نامور محقق کو ہے۔ براہ کرم اس بارے میں کچھ تفصیل مل جائے تو ممنون رہوں گا۔ ہمارا خیال ہی ہے کہ وہ بھوپال میں مدفون ہیں۔

    خیر اندیش
    راشد اشرف
    کراچی سے

    • muslimsaleem says:

      Dear Rashid Ashraf Sb,
      You are indeed doing a Yeoman’s service for Urdu literature. Hats off to you. I am also doing my bit. I have developed directories of poets and writers of various cities and countries all alone and with very limited resources. Please send me Ibne Saeed’s details. Inshallah, I will include it in the directory of Allahabad poets. I have already mentioned date and year of Mulla Ramuzi’s death and that he was laid to rest at Bhopal. This can be confirmed by clicking following link.
      http://khojkhabarnews.com/?p=350

      Best wishes

      Muslim Saleem

  5. zest70pk says:

    جناب مسلم سلیم صاحب!
    جزاک اللہ جناب والا، سلامت رہیئے

    آپ کی بدولت ایک الجھن رفع ہوئی اور بارے ملا رموزی، ایک ابہام جو یہاں کراچی کے چند اہل علم حضرات میں پایا جاتا تھا، دور ہوا۔

    پروفیسر مجاور حسین رضوی کے بارے میں تفصیل جلد ارسال کرتا ہوں۔ ان کی سن 50 کی دہائی کی تصویر تو آپ نے یہاں اس بلاگ ہپر شامل کی ہوئی ہے، اس کے علاوہ ایک حالیہ تصویر بھی ارسال کروں گا جسے ان کے صاحبزادے نے فرزند ابن صفی کو بھیجا تھا اور ان کے ذریعے ہمارے پاس پہنچی تھی۔

    آپ کی مرتب کردہ ڈائرکٹری دیکھنے کے بعد ہی آپ سے رابطہ کیا تھا۔ میری نااہلی تو دیکھیے کہ اس کو بغور دیکھنے کے باوجود بھی ملا رموزی کے احوال کو دیکھنے میں چوک ہوئی۔

    آپ نے لکھا ہے کہ آپ ڈائرکٹری مرتب کرنے کا یہ کام اپنے محدود وسائل کے باوجود سرانجام دے رہے ہیں۔ میری نظر میں یہ سودا جس کے سر میں سما جائے وہ خوش نصیب اور اس سے استفادہ کرنے والے خوش قسمت ترین کہلاتے ہیں۔ دیوانوں کو بخشش کا ایک گداز ہمیشہ ملا کرتا ہے۔ ایسے ہی ایک دوانگی میں یہ خاکسار اردو خودنوشتوں کے تعلق سے مبتلا ہے۔ لنکس یہاں اس لیے درج کررہا ہوں کہ خاکسار کی اس ویب سائٹ کے ہیں جو خالصتا غیر تجارتی ہے لہذا لنکس کو درج کرنے میں کسی ہچکچاہٹ کا سامنا نہیں ہوتا، آپ کے اس بلاگ کو یقیننا ہندوستان کے کئی اہل علم بھی دیکھتے ہوں گے:

    http://www.wadi-e-urdu.com/urdu-autobiographies-part-1/
    http://www.wadi-e-urdu.com/urdu-autobiographies-part-2/

    اردو خودنوشت سوانح عمریوں کا موضوع ایک سدا بہار موضوع ہے۔ درج بالا لنکس پر لگ بھگ 700 سے زائد کتابوں کے سراوراق بمعہ نام مصنف، ناشر و سن اشاعت محفوظ ہیں اور ان میں مستقل بنیادوں پر اضافہ ہوتا رہتا ہے۔ خاص بات یہ ہے کہ ان کتابوں میں ہندوستانی خودنوشتیں بھی شامل ہیں۔ اس سلسلے میں کئی ہندوستانی احباب نے مدد فرمائی ہے۔ بالخصوص علی گڑھ کے پروفیسر اطہر صدیقی صاحب اور الہ آباد کے چودھری ابن النصیر صاحب نے کئی اہم خودنوشتٰیں خاکسار کو کراچی بھیجیں۔ ادھر دکن سے اعجاز عبید صاحب اور پروفیسر رحمت اللہ یوسف زئی صاحب کی عنایتیں اس حقیر پر رہیں۔ غرض یہ کہ کس کس کا ذکر کروں۔ اردو بک ریویو کے عارف اقبال (جناب ابن صفی کے ایک سچے پرستار) اور جامعہ ملیہ دہلی کے ڈاکٹر خالد جاوید کے نام رہے جاتے ہیں۔

    خیر اندیش
    راشد اشرف
    کراچی سے

  6. Pingback: Urdu poets and writers of Allahabad | Muslimsaleem's Blog

  7. Hamza Shah says:

    Sheikh-ul- Mashaiq Hazrat Syed Shah Mohammad Khalilullah Junaidi was among those whose efforts during the creation of Pakistan cannot be over looked. He belonged to the noble family of Ghazi Pur in UP- India and Daira Hazrat Shah Mohammad Ajmal of Allahabad – India . With his knowledge, Khalilullah Junaidi continued to work even after partition in the fields of Urdu literature, English language and religion. In 2006 before leaving for Umrah, a session of mehfil-e-naat was arranged in his honor , in which Sabi- Rehmani dedicated him a special naat ? Dear Land of Medina, do have some space for me.? He was a religious poet and wrote many great Naats which became very famous among the masses.
    Hazrat Shah Khalilullah then left for Umrah during the Holy Month of Ramadan in 2006, where on the 21st of Ramadan he passed away in Medina. He was burried in Jannat-ul-Baqi, right below the grave of Hazrat Usman Ghani ( R.A) and Hazrat Halema Sadiya ( R.A)

    • muslimsaleem says:

      Dear Hamza Shah
      thanks for information. If you have knowledge about any other poet and writer of Allahabad, kindly provide brief details.
      Best wishes
      Muslim Saleem

      • Hamza Shah says:

        BHAI ASSALAM O ALLIKUM !
        Mazrat ke saath arz karna chahta hoon k aap ke blog page per SHAH KHALIL ULLAH JUNAIDI ki main heading mai TAKHALLUS ki spelling me ghalti hoi hai . baraey mehrbani aap tasheeh ferma kar shukrya ka moqa den.
        Niazmand
        HAMZA SHAH

  8. حضرت سید شاہ محمد اکمل اجملی رحمتہ اللہ علیہ
    آپ برصغیر کے مشہور محقق ، اور مستند جدید شاعر کی حیثیت سے شہرت رکھتے ہیں

    برصغیر کی تاریخ میں دائرہ شاہ اجمل الہ آباد وہ اہم ادبی مقام ہے جہاں ریاضت وحق شناسی تعلیم کے ساتھ زبان و ادب کی بھی خدمت کی جاتی رہی ہے اور اس کا ذکر تمام تذکرہ نگاروں نے اپنی کتاب میں کیا ہے،الہ آباد کی تاریخ کا اگر مختلف ادوار پر مبنی مطالعہ کیا جائے تو محض یہ ایک داستان نہیں ہے بلکہ اپنے عہد کی تہذیبی ثقافتی، سیاسی، اور تاریخی اقدار کی آئینہ دار ہے عہد قدیم سے دور جدید کا عکس ہے یہ کہنا غلط نہیں ہوگا کہ آج برصغیر میں دینی ،علمی، وادبی رونق باقی رہ گئی ہے ان ہی پرانے چراغوں کا صدقہ ہے، اور الہ آباد کا خطہ ان کی روشنی کا امین ہے، الہ آباد کے مشائخ عظام نے علم و ادب کی جس طرح خدمت کی ہے اس کا اندازہ میرے خال معظم سید شاہ محمد اکمل اجملی نائب سجادہ نشین دائرہ شاہ اجمل الہ آباد رحمتہ اللہ علیہ کے رشحات قلم کا ثمر ہے،حضرت قبلہ سید شاہ محمد اکمل اجملی برصغیر کے مشہور محقق ، اور مستند جدید شاعر کی حیثیت سے شہرت رکھتے تھے ، دائرہ شاہ اجمل کی ادبی خدمات پر بڑی گہری نگاہ تھی ،الہ آباد یونیورسٹی سے فارسی میں ایم اے کرنے کے بعد الہ آباد کے مشاہیر کے ادبی کارناموں پر تحقیق کرتے رہے خال معظم مرحوم کے تصانیف میں تذکرة الاولیا،تذکرةالا صفیاء،تذکرة سراج منیر،حیات افضل النور( دنیائے اسلام کی اہم شخصیات کی حیات وکارنامہ) تبصروں کی دنیاکے علاوہ منظوم تصانیف میں مرج البحرین،( قصائد ونظموں کا مجموعہ) العصر غزلوں اور نطموں کے مجموعہ کے علاوہ حضرت رسالت مآبﷺ کی حیات مقدسہ پر مبنی 571 بندوں پر مشتعمل مسدس کے انداز میں قصیدہ بڑی اہمیت کا حامل ہے جبکہ آخر الذکر الہ آباد کے جدید وقدیم شعراء کی نعتون کا مجموعہ ہے،حضرت میر سید محمد کالپوی رحمتہ اللہ علیہ کی حیات اور نقش دوام بھی اعلی تخلیقات میں شامل ہیں ، حضرت قبلہ اکمل میان رحمتہ اللہ علیہ کی زندگی کا بیشتر وقت دائرہ شاہ اجمل کے بزرگوں کے ادبی خدمات کے جائزہ میں گزرا اور یہ تصنیف بھی حضرت اکمل میاں رحمتہ اللہ علیہ کی تحقیقی کوششوں اور کاوشوں کا نادر نمونہ ہے جس میں دائرہ شاہ اجمل کے مشاہیر کی فارسی و اردو ادب کی خدمات کا جائزہ لیا جارہا ہے ، کتاب پاکستان میں تکمیل کے آخری مراحل میں ہے، میری دعا ہے کہ پروردگار عالم میرے خال معظم کو سرکار دوعالم کی شفاعت نصیب فرمائے آمین بجاہ سید المرسلینﷺ
    نیاز کیش راقم
    شاہ ولی اللہ

  9. حضرت سید شاہ محمد خلیل اللہ جنیدی رحمتہ اللہ علیہ
    آپ ایک مستند ترقی پسند شاعر کی حیثیت سے پہچانے جاتے تھے آپ کا تخلص ندیم غازی پوری تھا

    محترم سید شاہ محمد خلیل اللہ جنیدی رخمتہ اللہ علیہ کی ہے جو بیک وقت ایک شفیق والد،ہردل عزیز استاد اور روحانی شخصیت کے مالک تھے ،،، آپ بھارت کے صوبہ اتر پردیش ( یوپی) کے شہرغازی پور کے حسنی حسینی سادات گھرانے میں 1932میں پیدا ہوئے، خاندانی اعتبار سے آپ کا شمار غازی پور کے امراء میں ہوتا تھا ،اس خاندان کے بیشتر افراد ہندوستان میں اور قیام پاکستان کے بعد ملک کے اعلی ترین عہدوں پر فائز رہے ،اور آج بھی مختلف شعبوں میں کارہائے نمایا ں انجام دئے رہے ہیں شاہ خلیل اللہ رحمتہ اللہ علیہ کے والد سید شاہ محمد حفیظ اللہ انڈین یولیس میں ایس پی کے عہدہ پر تعینات تھے شاہ صاحب قبلہ کا شمار اپنے بہن بھائیوں میں سب سے آخری تھا، پیدائش سے چند ماہ قبل ہی والد بزرگوار کا سایہ سر سے اٹھ چکا تھا اور پیدائش کے ایک سال بعد والدہ ماجدہ بھی رحلت فرما گئیں آپ کی پرورش کی ذمہ داری بڑی بہنوں اور خاندان کے دیگر بزرگوں کے حصہ میں آئی، ابتدائی تعلیم غازی پور کی ایک درسگا ہ سے حاصل کی جبکہ اعلیٰ تعلیم کے لیے کلکتہ اور الہ آباد کا سفر اختیار کیا، قیام پاکستان سے قبل الہ آباد میں قیام کے دوران ترقی پسند تحریک میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا ، ترقی پسند تحریک کے ساتھیوں میں ممتاز محقق و شاعر ڈاکٹر اجمل اجملی ، تیغ الہ آباد ی جوپاکستان آمد کے بعد مصطفے زیدی کہلائے اور اردو جاسوسی ناول نگاری کے موجد اسرار احمد جوابن صفی ، اسلام چنگیزی و دیگر شامل تھے جبکہ دیگر ساتھیوں میں نعتیہ شاعرراز الہ آبادی ،نافع رضوی و دیگر شامل تھے، ناموس رسالت کی تحریک میں بھی آپ پیش پیش رہے اور اس دوران جیل کی صعوبتیں بھی برداشت کیں آپ شاعری سے بھی شغف رکھتے تھے اور ایک مستند ترقی پسند شاعر کی حیثیت سے پہچانے جاتے تھے آپ کا تخلص ندیم غازی پوری تھا اسی دوران آپ درس وتدریس اور صحافت کے شعبہ سے بھی وابستہ رہے ،، ملازمت کے حصول میں میں بمبئی چلے گئے جہاں کچھ عرصے روزنامہ انقلاب سے وابستہ رہے ، ، شاہ صاحب قبلہ کے خاندان کے بیشتر افراد قیام پاکستان کے بعد کراچی اور لاہور منتقل ہوچکے تھے اور اعلی سرکاری عہدوں پر فائز تھے آپ کے بڑے ماموں شاہ نذیر عالم جو بھارت کے صوبے یوپی میں ڈی آئی جی پولیس کے عہدہ پر تعینات تھے پاکستان کے پہلے وزیراعظم لیاقت علی خان کی درخواست پر بھارت سے پاکستان چلے آئے ، اور آئی جی پولیس پاکستان کے عہدے پر فائز رہتے ہوئے محکمہ پولیس کی تنظیم نو کی ، خاندان کے بزرگوں کے حکم پر شاہ صاحب قبلہ بھی انیس سو انسٹھ میں پاکستان چلے آئے۔ خاندان کے افراد چونکہ کراچی کے علاقے ناظم آباد نمبر دومیں قیام پزیر تھے لہذ ا آپ نے بھی ناظم آباد کو ترجیح دی اور درس و تدریس کے اس سلسلے کو جس کاآغاز الہ آباد سے کیا تھا اور دوران ہجرت موقوف ہوگیاتھا ایک بار پھر کراچی پہنچنے پرجاری وساری ہوگیا، ناظم آباد کے علاقے گولیمار کے پسماندہ محلہ علی بستی میں چند دوستوں کے ساتھ مل کر ضیاء العلوم کے نام سے ایک اسکول کی بنیاد رکھی ، تاہم بعدازاں سرکاری ملازمت اختیار کرلی اور گورنمنٹ
    بوائزسیکنڈری اسکول نمبر2پی ای سی ایچ ایس سوسائٹی بلاک 6 سے وابستہ ہوکر رہ گئے اور اسی اسکول سے ریٹائرمنٹ حاصل کی،1980کی دہائی میں آپ ایک بار پھر بھارت تشریف لے گئے جہان اپنے آبائی شہر غازی پور میں جد امجد قطب الااقطاب سید شاہ جنید غازی پوری رضی اللہ تعالی عنہ اور دائرہ شاہ اجمل الہ آباد میں حضرت سید شاہ محمد افضل الہ آبادی شاہ اجمل رحمتہ اللہ علیہ سمیت دیگر بزرگان دین کے مزارات پر حاضری دی ۔ الہ آباد میں قیام کے دوران حضرت موصوف میرے جد مادری حضرت ولی کامل واکمل قطب الصمدمولانا شاہ سید احمد اجملی جنیدی قادری رحمتہ اللہ علیہ سابق سجادہ نشین دائرہ شاہ اجمل الہ آباد یوپی انڈیا کے دست حق پرسلسلہ قادریہ جنیدیہ میں بیعت ہوئے حضرت نے خرقہ وخلافت سے سرفراز کیا اورچاروں سلاسل میں بیعت کی اجازت عطا ء فرمائی بھارت سے واپسی کے بعد پاکستان میں باقاعدہ سلسلہ جنیدیہ قادریہ واجملیہ کی ترویج کا کام شروع کیا ۔حضرت شاہ صاحب قبلہ 2006 میں زیارت حرمین شریفین کی غرض سے سعودی عرب تشریف لے گئے تھے جہاں 21رمضان المبارک کو مدینہ منورہ میں بعد نماز تراویح وصال فرما ء گئے حضرت شاہ صا حب کو جنت البقیع کے پرانے حصہ میں حضرت حلیمہ سعدیہ اور حضرت عثمان غنی رضی اللہ تعالی عنہ کی قبروں کے درمیان سپردخاک کیا گیا۔
    شاہ صاحب کے چند اشعار

    تلخ آب سہی، زہر آب سہی، پینے دے مجھے ایک جام سہی
    ہنس بول کے جی لوں چند لمحے یہ زیست برائے نام سہی
    ڈھلتی ہے جو شب تو ڈھلنے دو اسکا بھی مداوا ہوتا ہے
    چھٹ جائے گی تاریکی یہ صبح خیالِ خام سہی
    یہ کم ہے کہ تیرے غم ہی کو اشکوں سے سنوارا کرتا ہوں
    تیرا یہ ندیم# ہے نغمہ سرا ،برباد سہی بدنام سہی
    شاعری میں ندیم #تخلص کا استعمال کیا کرتے تھے۔ بھارت میں قیام کے دوران اٰیک ناول ”چنوتی ‘ کے نام سے‘ شائع ہوا ہے ۔

    • حضرت سید شاہ محمد اکمل اجملی رحمتہ اللہ علیہ

      آپ کا شماربرصغیر کے مشہور محقق ، اور مستند جدید شاعروں میں ہوتا ہے

      برصغیر کی تاریخ میں دائرہ شاہ اجمل الہ آباد وہ اہم ادبی مقام ہے جہاں ریاضت وحق شناسی تعلیم کے ساتھ زبان و ادب کی بھی خدمت کی جاتی رہی ہے اور اس کا ذکر تمام تذکرہ نگاروں نے اپنی کتاب میں کیا ہے،الہ آباد کی تاریخ کا اگر مختلف ادوار پر مبنی مطالعہ کیا جائے تو محض یہ ایک داستان نہیں ہے بلکہ اپنے عہد کی تہذیبی ثقافتی، سیاسی، اور تاریخی اقدار کی آئینہ دار ہے عہد قدیم سے دور جدید کا عکس ہے یہ کہنا غلط نہیں ہوگا کہ آج برصغیر میں دینی ،علمی، وادبی رونق باقی رہ گئی ہے ان ہی پرانے چراغوں کا صدقہ ہے، اور الہ آباد کا خطہ ان کی روشنی کا امین ہے، الہ آباد کے مشائخ عظام نے علم و ادب کی جس طرح خدمت کی ہے اس کا اندازہ میرے خال معظم سید شاہ محمد اکمل اجملی نائب سجادہ نشین دائرہ شاہ اجمل الہ آباد رحمتہ اللہ علیہ کے رشحات قلم کا ثمر ہے،حضرت قبلہ سید شاہ محمد اکمل اجملی برصغیر کے مشہور محقق ، اور مستند جدید شاعر کی حیثیت سے شہرت رکھتے تھے ، دائرہ شاہ اجمل کی ادبی خدمات پر بڑی گہری نگاہ تھی ،الہ آباد یونیورسٹی سے فارسی میں ایم اے کرنے کے بعد الہ آباد کے مشاہیر کے ادبی کارناموں پر تحقیق کرتے رہے خال معظم مرحوم کے تصانیف میں تذکرة الاولیا،تذکرةالا صفیاء،تذکرة سراج منیر،حیات افضل النور( دنیائے اسلام کی اہم شخصیات کی حیات وکارنامہ) تبصروں کی دنیاکے علاوہ منظوم تصانیف میں مرج البحرین،( قصائد ونظموں کا مجموعہ) العصر غزلوں اور نطموں کے مجموعہ کے علاوہ حضرت رسالت مآبﷺ کی حیات مقدسہ پر مبنی 571 بندوں پر مشتعمل مسدس کے انداز میں قصیدہ بڑی اہمیت کا حامل ہے جبکہ آخر الذکر الہ آباد کے جدید وقدیم شعراء کی نعتون کا مجموعہ ہے،حضرت میر سید محمد کالپوی رحمتہ اللہ علیہ کی حیات اور نقش دوام بھی اعلی تخلیقات میں شامل ہیں ، حضرت قبلہ اکمل میان رحمتہ اللہ علیہ کی زندگی کا بیشتر وقت دائرہ شاہ اجمل کے بزرگوں کے ادبی خدمات کے جائزہ میں گزرا اور یہ تصنیف بھی حضرت اکمل میاں رحمتہ اللہ علیہ کی تحقیقی کوششوں اور کاوشوں کا نادر نمونہ ہے جس میں دائرہ شاہ اجمل کے مشاہیر کی فارسی و اردو ادب کی خدمات کا جائزہ لیا جارہا ہے ، کتاب پاکستان میں تکمیل کے آخری مراحل میں ہے، میری دعا ہے کہ پروردگار عالم میرے خال معظم کو سرکار دوعالم کی شفاعت نصیب فرمائے آمین بجاہ سید المرسلینﷺ

  10. Sahar Fatima says:

    Regarding Ibne Saeed. He lives in Allahabad and not in Karachi. Some more details about him
    Dr. S.M.H. Rizvi a man of diverse caliber has penned 1057 novels in Urdu & Hindi! Under the pen name “Ibne Saeed”. His thesis was titled “Elements of National integration in Urdu Poetry” which received several awards, including the coveted one from the Urdu Academy. He is the man behind Roomani Dooniya.
    Roomani Duniyan, is a romantic comedy covering the society of 1950s & 60s with a wider character base in each novel from all socio-economic strata. It may be college students, rich or poor. This series depicts pain, pleasure, struggle and limitations of that era but above board the humour has not been missed out rather it stands out.

    • muslimsaleem says:

      Dear Sahar Fatima, thanks for the comment. Please send some picture of Ibne Saeed to my email address
      muslimsaleem@rediffmail.com

      Muslim Saleem

    • جناب مسلم صاحب!
      احب!
      خاکسار کی ارسال کردہ پروفیسر مجاور حسین رضوی کی تازہ تصویر کو شامل کرنے کا شکریہ۔

      آپ نے مجاور صاحب کے تحاریر کی تعداد لکھ کر بہت اچھا کیا، اس طرح یہ بات ریکارڈ پر آگئی۔ خاکسار نے کبھی دوران گفتگو ان سے اس بارے میں دریافت نہیں کیا تھا۔

      راقم کی ابن صفی پر مرتب کردہ تازہ کتاب “ابن صفی-کہتی ہے تجھ کو خلق خدا غائبانہ کیا” میں مجاور صاحب کا ایک دلچسپ مضمون “ستارہ جو ڈوب گیا، روشنی جو باقی رہے گی” شامل ہے۔

      مجاور صاحب الہ آباد کے ادارہ نکہت سے وابستہ رہے بلکہ یوں کہیے کہ اس کے قیام میں جو شخصیات شامل تھیں ان میں سے ایک تھے۔ بقیہ لوگوں میں عباس حسینی، ابن صفی اور شکیل جمالی تھے۔ ملک زادہ منظور احمد نے اپنی خودنوشت “رقص شرر” میں ذکر کیا ہے۔

      مسلم صاحب!
      ایک عاجزانہ درخواست ہے۔ عباس حسینی صاحب کے بارے میں تفصیل بالخصوص سوانحی حالات ضرور شامل کیجیے

  11. Dr Zafar Taqvi, Bazm-e-Adab Urdu, Houston, Texas, USA says:

    (Forgive me – my Urdu script is currently not working)
    Allahabad meN aur bhi bahut shoara the jin ko maiN ne apne bachpan meN mushaeroN meN suna hai. Aur bhi shoara hain jin ke baare me suna hai jab maiN bahut chhota tha.

    In shoara meN ……..

    Justice Anand Narain Mulla
    Sir Tej Bahadur Sapru
    Bismil Allahabadi
    Nooh Narvi
    Shafique Allahabadi
    Rangeen Allahabadi
    Ajmal Ajmali
    aur bahut se shoara

    Sabhi shoara ki tafseel aapko Prof Aqeel se aasani ke sath mil sakti hai. Kuch ka tazkera Prof Aqueel ne apni kitaab me kiya hai.

    Aapka

    (Dr) Zafar Taqvi [Zafar Kararvi]

  12. sajid hanfi says:

    best composition but aap allahabad ke ek aur senior urdu poet ko bhool gaye jinka naam DR. INAM HANFI hai.

  13. Pingback: Urdu poets and writers of UP by Muslim Saleem | www.khojkhabarnews.com

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s