اردولٹیریچرکے ساتھ میری آب بیتی: ذوالقرنین گیلانی

ردوزبان ہماری قومی زبان ہے پاکستان میں8%لوگ ایسے ہیں جنکی مادری زبان اردوہے اردوزبان برصغیرمیں شروع ہوئی۔جس نے بڑی خوبصورتی اورتیزی کیساتھ اپناسفرطے کیا۔اس میں اردوشعراء کرام کابہت بڑاحصہ ہے ورنہ برصغیرکی سرکاری زبان فارسی تھی برصغیرکے حکمران ترک تھے۔برصغیرکے حکمران مغل تھے۔ان کی گھریلوزبان ترکی تھی۔ اردواس وقت مکمل زبان بن چکی ہے۔اب اسکی گرائمربھی ہے قاعدے اور قانون بھی ہیں اردوخودترکی زبان کالفظ ہے۔جس کے معنی ،لشکری کے ہیں اردوہماری قومی زبان ہے دنیاکی ہم وہ واحدقوم ہیں جواپنی دشمن آپ ہیں۔ہم اپنی اردوکے ایسے دشمن ہیں کہ اسے ختم کرنے پرتلے ہوئے ہیں اس میں پوری قوم نے یکجاہوکرایساحصہ ڈالاہے کہ جیسے اردوان کی دشمن ہو اور ترقی میں رکاوٹ بنی ہوئی ہو دنیاکے دانشور مفکرین بتابتاکے تھک گئے ہیں بچوں کوتعلیم مادری زبان میں دو،اگریہ بھی نہیں کرسکتے توکم ازکم قومی زبان میں دو۔ہم نے ہمیشہ سے الٹاکام کرنے کے عادی ہیں اوراسی کی پیروی کرتے ہوئے ہم انگلش میڈیم سکولوں کے پیچھے پڑگئے ہیں۔اسی لیے ہم تعلیمی میدان میں ترقی نہیں کرہارہے۔خیبرپختونوامیں اردومیں تعلیم دی جاتی ہے سندھ میں سندھی اور اردوملائی جارہی ہے پنجاب میں اردو اورانگلش ہے جب انٹرویویاکسی بڑی جاب کیلئے لڑکے ا پلائی کرتے ہیں توانٹرویوانگلش میں لیاجاتاہے۔ جس کی وجہ سے دوسرے صوبے پیچھے رہ جاتے ہیں جیسے خیبرپختونوا،سندھ اور بلوچستان ہیں ۔سی ایس ایس کے امتحانات میں اپرپنجاب کامیاب ہوجاتاہے کیونکہ وہاں پرانگلش مضبوطی کیساتھ موجودہے اورچھے طریقے سے پڑھائی جارہی ہے۔اسی طرح پنجاب اعلیٰ عہدوں پرچلاجاتاہے اورباقی صوبے پیچھے رہ جاتے ہیں پھرپنجاب کے اوپریہ الزام صحیح لگتاہے کہ پنجابی بیوروکریسی ملک پرحکومت کرہی ہے سندھ میں رہنے والاغریب باپ کیسے ترقی کرے گاجس نے اپنے بیٹے یابیٹی مشکل سے MAکروایاوہ کہاں انگلش سکولوں کی فیس پوری کرسکتاہے۔ملک میں یکساں نظام تعلیم نہیں ہے جسکی وجہ سے ملکی نظام مشکلات کاشکارہے تمام صوبوں میں اگریکساں نظام تعلیم ہوگاتوملک بھی ترقی کرئیگا۔اقتدارکی ر سہ کشی بھی نہ ہوگی۔ایک صوبہ کے لوگ جب ملک کے تمام اداروں پرحکمران ہوں گے تووہ کیسے اوروں کوآنے دیں گے صوبائیت،نسل پرستی اور فرقہ پرستی ہمارے دل اوردماغ پرحکمرانی کرتی ہے۔
یکساں نظام تعلیم نہ ہونے کیوجہ سے اردومعدوم ہوتی جارہی ہے اعلیٰ عدلیہ کے فیصلے انگلش زبان میں ،سیاسی لوگوں کے فیصلے انگلش میں مجھے سمجھ نہیں آتی یہ پاکستان کے حکمران ہیں یاانگلش لوگوں کے غلام ۔اردوکی ترقی کیلئے ہم سب کوآگے آناچاہئے اس وقت تمام اداروں کواس بات کاپابندکیاجائے کہ تمام فیصلوں کی کاپیاں اورکاغذات اردومیں ہوں۔اگریہ نہیں کرسکتے تومنافقت کادامن چھوڑیں اوراعلان کردیں کہ اب سے تعلیمی اداروں میں اردونہیں ہوگی۔تاکہ ہم کوپتہ لگے کہ ہم کس سمت جارہے ہیں ہرسال نصاب تبدیل طلبہ اور اساتذہ ذہنی کوفت کاشکارہیں۔
میں نے بی اے میں اردولٹیریچرکے مضمون کاانتخاب کیاتولوگوں نے مجھے بیوقوف کہناشروع کردیا۔یہ کونسامضمون کاتم نے انتخاب کیاہے۔کیاپڑاہے اردومیں،اردو میں نمبرکم آتے ہیں میرے کالج میں اردوکے4پروفیسرزہیں کسی ایک کوبھی گوارا نہیں کہ وہ اردوپڑھائیں۔پہلے دن جب میں اپنے اردو پروفیسرز کے پاس گیااس نے سیدھے طریقے سے مجھ سے بات نہیں کی۔وہ مجھ پرایسے ناراض تھاجیسے میں نے اس کے منہ سے نوا لاچھین لیا ہو۔ہم70کی تعداد میں ہم لڑکے تھے۔جس میں2لڑکے جنہوں نے اردولٹیرچررکھاہواتھا۔باقی تمام لڑکوں نے ان مضامین کاانتخاب کیا۔جن سے نمبراچھے ائیں اور آگے یونیورسٹی میں داخلہ مل جائے۔ہم لوگوں کامعیارصرف پیٹ بن گیا۔نمبراچھے اجائیں۔نوکری مل جائے کھائیں پئیں۔بچے پیداکریں اوراللہ حافظ۔بقول اکبر الہ آبادی
ْ ہم کیا کہیں احباب کیا کا ر نمایاں کر گئے بی اے ہوے نوکر ہوے پنشن ملی پھر مر گئے
انتہائی نچلے درجے کی سوچ ہے ہماری۔اگلے دن پروفیسرصاحب کے پاس گیاتوجواباًانہں نے ارشاد فرمایاکہ شاہ صاحب اپ نے اردوکیوں رکھی۔اس میں نمبرنہیں آئیں گے۔پھرآپ کوآگے داخلہ نہیں ملے گا۔آپ کونوکری نہیں ملے گی۔اس پروفیسرنے مجھے یہ لیکچردیامیں نے ضدکی اورپوچھاکہ سرمیں نے اردوپڑھی ہے آپ بک کانام بتائیں ظلم کی انتہااس وقت ہوگئی جب اانہوں نے فرمایاکہ مجھے کتاب کانہیں معلوم۔میں نے5سال سے کتاب نہیں دیکھی آپ خودپتہ کرو۔قارئین میں ایک ہفتے تک تمام اردو کے پروفیسراوریچرسے اردوکی کتاب کاپتہ کرتارہا۔اس کانام کیاہے کسی مصنف کی لینے ہے کونسی گئیڈلوں وغیرہ وغیرہ۔سب مجھے حیرانگی سے دیکھتے اور مجھ سے سوال کرتے تم نے اردوکیوں رکھی ہے تم پرانے خیالات کے مالک ہو وغیرہ وغیرہ جب کتاب کاپتہ چلاتوکتاب نہیں مل رہی تھیں بذریعہ ڈاک کتاب ملتان سے منگوائی مگرپروفیسر نے نہ پڑھانے کی قسم اٹھارکھی تھی میں نے دبرداشتہ ہوکرمضمون تبدیلی کی درخواست دے دی۔جب مضمون کی تبدیلی کی درخواست پرنسپل کودی تو اس وقت مرے کالج کے پرنسپل صاحب اوراردوکے پروفیسرصاحب مزاق اڑارہے تھے۔کیا یہ لوگ جنہوں نے طلباء کوتربیت دینی ہوتی ہے بزرگوں کی اچھی روایات اوراقدارکواگلی نسل کومنتقل کرناہوتاہے کیایہ لوگ ملک میں کردارکی تکمیل کریں گے؟ یہ پیٹ کے کردارکوبڑھائیں گے۔تاکہ ملک کامخلص نہیں بلکہ اپنے پیٹ کاہمدرد پیداہو۔

Back to Conversion Tool

Website Hosting | Back to Home Page

About Muslim Saleem

Muslim Saleem (born 1950) is a great Urdu poet, writer and journalist and creator of massive directories of Urdu poets and writers on different blogs. These directories include 1. Urdu poets and writers of India part-1 2. . Urdu poets and writers of India part-II 3. Urdu poets and writers of World part-I 4. Urdu poets and writers of World part-II, 5. Urdu poets and writers of Madhya Pradesh, 6. Urdu poets and writers of Allahabad, 7. Urdu poets and writers of Shajahanpur, 8. Urdu poets and writers of Jammu-Kashmir and Kashmiri Origin, 9. Urdu poets and writers of Hyderabad, 10. Urdu poets and writers of Augrangabad, 11. Urdu poets and writers of Maharashtra 12. Urdu poets and writers of Tamil Nadu, 13, Urdu poets and writers of Karnataka 14. Urdu poets and writers of Gujarat, 15. Urdu poets and writers of Uttar Pradesh, 16. Urdu poets and writers of Canada, 17. Urdu poets and writers of Burhanpur, 18. Urdu poets and writers of West Bengal 19. Female Urdu poets and writers, 20. Hindu Naatgo Shuara etc. These directories can be seen on :- 1. www.khojkhabarnews.com 2, www.muslimsaleem.wordpress.com 3. www.urdunewsblog.wordpress.com, 4. www.khojkhabarnews.wordpress.com. 5. www.poetswritersofurdu.blogspot.in 6 www.muslimsaleem.blogspot.in 7. www.saleemwahid.blogspot.in (Life) Muslim Saleem was born in 1950 at Shahabad, Hardoi, Uttar Pradesh in India, brought up in Aligarh, and educated at Aligarh Muslim University. He is the son of the well-known Urdu poet Saleem Wahid Saleem. He has lived in Bhopal, India since 1979. (Education): Muslim Saleem studied right from class 1 to BA honours in AMU schools and University. He completed his primary education from AMU Primary School, Qazi Para Aligarh (Now converted into a girls school of AMU). He passed high school exam from AMU City School, Aligarh and B.A. Hons (Political Science) from Aligarh Muslim University Aligarh. Later, Muslim Saleem did M.A. in Arabic from Allahabad University during his stay in Allahabad. (Career) Muslim Saleem began his career as a journalist in the Urdu-language newspaper Aftab-e-Jadeed, Bhopal. He is multilingual journalist having worked on top posts with Dainik Bhaskar (Hindi), Central Chronicle (English), National Mail (English), News Express (English) and most recently as the chief copy editor of the Hindustan Times in Bhopal. At present, Muslim Saleem is English news advisor to Directorate of Public Relations, Government of Madhya Pradesh. (as on December 1, 2012). (Works and awards) Muslim Saleem has been appointed as Patron of Indo-Kuwait Friendship Society. He is the author of Aamad Aamad, a compilation of his poetry published by Madhya Pradesh Urdu Academi. Several of his couplets are well known in the Urdu language. He won the Yaad-e-Basit Tarhi Mushaira, a poetry competition, in 1982. In 1971, Muslim Saleem was awarded by Ismat Chughtai for his Afsana “Nangi Sadak Par” at AMU Aligarh. His ghazals and short stories have been published in Urdu-language publications Shair, Ahang, Asri, Adab, Agai, Naya Daur, Sada-e-Urdu, Nadeem and other periodicals and magazines. His work in service of the Urdu language was recognized in a special 2011 edition of the periodical Abadi Kiran, devoted to his work. Evenings in his honour have been organised in a number of cities. Muslim Saleem is currently compiling a massive database of poets and writers of the Urdu language, both historic and currently active. (Translation of Muslim Saleem’s work in English): Great scholar Dr. Shehzad Rizvi based in Washington has translated Muslim Saleem’s ghazal in English even though they have never met. Dr. Rizvi saw Muslim Saleem’s ghazals on websites and was so moved that he decided to translate them. (Praise by poets and writers) Great poet and scholar of Urdu and Persian Dr. Ahmad Ali Barqi Azmi has also written a number of poetic tributes to Muslim Saleem. Dr. Azmi and Muslim Saleem are yet to meet face to face. Beside this, great short-story writer and critic Mehdi Jafar (Allahabad, Bashir Badr (Bhopal), Jafar Askari (Lucknow), Prof. Noorul Husnain (Aurangabad), Kazim Jaffrey (Lahore) and a host of others have written in-depth articles defining Muslim Saleem’s poetry. (Muslim Saleem on other websites) Muslim Saleem’s life and works have been mentioned on Wikipedia, www.urduadab4u.blogspot.in, www.urduyouthforum.org and several other website. In fact, www.urduyouthforum.org has given credit to Muslim Saleem for lifting a number of pictures and entries from Muslim Saleem’s websites and blogs. (Address): Muslim Saleem, 280 Khanugaon, VIP Road, Bhopal-462001 Mobiles: 0 9009217456 0 9893611323 Email: muslimsaleem@rediffmail.com saleemmuslim@yahoo.com Best couplets: Zindagi ki tarah bikhar jaayen…… kyun ham aise jiyen ki mar jaayen kar di meeras waarison ke sipurd…. zindagi kis ke naam mar jaayen rooh ke karb ka kuchh mudaawa no tha doctor neend ki goiyan likh gaya wo dekhne mein ab bhi tanawar darakht hai haalanke waqt khod chuka hai jaden tamam My Facebook url is http://en-gb.facebook.com/pages/Muslim-Saleem/176636315722664#!/pages/Muslim-Saleem/176636315722664?sk=info Other blogs http://urdupoetswriters.blogspot.com/ http://muslimspoetry.blogspot.com/ http://abdulahadfarhan.blogspot.com/ http://ataullahfaizan.blogspot.com/ http://hamaramp.blogspot.com/ http://madhyanews.blogspot.com/ http://cimirror.blogspot.com/
This entry was posted in Uncategorized. Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s