Diya Adabi Forum par Barqi Azmi ke taaruf ka link

https://www.facebook.com/groups/172732539569490/permalink/255367281306015/

Advertisements

About Muslim Saleem

Muslim Saleem (born 1950) is a great Urdu poet, writer and journalist and creator of massive directories of Urdu poets and writers on different blogs. These directories include 1. Urdu poets and writers of India part-1 2. . Urdu poets and writers of India part-II 3. Urdu poets and writers of World part-I 4. Urdu poets and writers of World part-II, 5. Urdu poets and writers of Madhya Pradesh, 6. Urdu poets and writers of Allahabad, 7. Urdu poets and writers of Shajahanpur, 8. Urdu poets and writers of Jammu-Kashmir and Kashmiri Origin, 9. Urdu poets and writers of Hyderabad, 10. Urdu poets and writers of Augrangabad, 11. Urdu poets and writers of Maharashtra 12. Urdu poets and writers of Tamil Nadu, 13, Urdu poets and writers of Karnataka 14. Urdu poets and writers of Gujarat, 15. Urdu poets and writers of Uttar Pradesh, 16. Urdu poets and writers of Canada, 17. Urdu poets and writers of Burhanpur, 18. Urdu poets and writers of West Bengal 19. Female Urdu poets and writers, 20. Hindu Naatgo Shuara etc. These directories can be seen on :- 1. www.khojkhabarnews.com 2, www.muslimsaleem.wordpress.com 3. www.urdunewsblog.wordpress.com, 4. www.khojkhabarnews.wordpress.com. 5. www.poetswritersofurdu.blogspot.in 6 www.muslimsaleem.blogspot.in 7. www.saleemwahid.blogspot.in (Life) Muslim Saleem was born in 1950 at Shahabad, Hardoi, Uttar Pradesh in India, brought up in Aligarh, and educated at Aligarh Muslim University. He is the son of the well-known Urdu poet Saleem Wahid Saleem. He has lived in Bhopal, India since 1979. (Education): Muslim Saleem studied right from class 1 to BA honours in AMU schools and University. He completed his primary education from AMU Primary School, Qazi Para Aligarh (Now converted into a girls school of AMU). He passed high school exam from AMU City School, Aligarh and B.A. Hons (Political Science) from Aligarh Muslim University Aligarh. Later, Muslim Saleem did M.A. in Arabic from Allahabad University during his stay in Allahabad. (Career) Muslim Saleem began his career as a journalist in the Urdu-language newspaper Aftab-e-Jadeed, Bhopal. He is multilingual journalist having worked on top posts with Dainik Bhaskar (Hindi), Central Chronicle (English), National Mail (English), News Express (English) and most recently as the chief copy editor of the Hindustan Times in Bhopal. At present, Muslim Saleem is English news advisor to Directorate of Public Relations, Government of Madhya Pradesh. (as on December 1, 2012). (Works and awards) Muslim Saleem has been appointed as Patron of Indo-Kuwait Friendship Society. He is the author of Aamad Aamad, a compilation of his poetry published by Madhya Pradesh Urdu Academi. Several of his couplets are well known in the Urdu language. He won the Yaad-e-Basit Tarhi Mushaira, a poetry competition, in 1982. In 1971, Muslim Saleem was awarded by Ismat Chughtai for his Afsana “Nangi Sadak Par” at AMU Aligarh. His ghazals and short stories have been published in Urdu-language publications Shair, Ahang, Asri, Adab, Agai, Naya Daur, Sada-e-Urdu, Nadeem and other periodicals and magazines. His work in service of the Urdu language was recognized in a special 2011 edition of the periodical Abadi Kiran, devoted to his work. Evenings in his honour have been organised in a number of cities. Muslim Saleem is currently compiling a massive database of poets and writers of the Urdu language, both historic and currently active. (Translation of Muslim Saleem’s work in English): Great scholar Dr. Shehzad Rizvi based in Washington has translated Muslim Saleem’s ghazal in English even though they have never met. Dr. Rizvi saw Muslim Saleem’s ghazals on websites and was so moved that he decided to translate them. (Praise by poets and writers) Great poet and scholar of Urdu and Persian Dr. Ahmad Ali Barqi Azmi has also written a number of poetic tributes to Muslim Saleem. Dr. Azmi and Muslim Saleem are yet to meet face to face. Beside this, great short-story writer and critic Mehdi Jafar (Allahabad, Bashir Badr (Bhopal), Jafar Askari (Lucknow), Prof. Noorul Husnain (Aurangabad), Kazim Jaffrey (Lahore) and a host of others have written in-depth articles defining Muslim Saleem’s poetry. (Muslim Saleem on other websites) Muslim Saleem’s life and works have been mentioned on Wikipedia, www.urduadab4u.blogspot.in, www.urduyouthforum.org and several other website. In fact, www.urduyouthforum.org has given credit to Muslim Saleem for lifting a number of pictures and entries from Muslim Saleem’s websites and blogs. (Address): Muslim Saleem, 280 Khanugaon, VIP Road, Bhopal-462001 Mobiles: 0 9009217456 0 9893611323 Email: muslimsaleem@rediffmail.com saleemmuslim@yahoo.com Best couplets: Zindagi ki tarah bikhar jaayen…… kyun ham aise jiyen ki mar jaayen kar di meeras waarison ke sipurd…. zindagi kis ke naam mar jaayen rooh ke karb ka kuchh mudaawa no tha doctor neend ki goiyan likh gaya wo dekhne mein ab bhi tanawar darakht hai haalanke waqt khod chuka hai jaden tamam My Facebook url is http://en-gb.facebook.com/pages/Muslim-Saleem/176636315722664#!/pages/Muslim-Saleem/176636315722664?sk=info Other blogs http://urdupoetswriters.blogspot.com/ http://muslimspoetry.blogspot.com/ http://abdulahadfarhan.blogspot.com/ http://ataullahfaizan.blogspot.com/ http://hamaramp.blogspot.com/ http://madhyanews.blogspot.com/ http://cimirror.blogspot.com/
This entry was posted in Uncategorized. Bookmark the permalink.

One Response to Diya Adabi Forum par Barqi Azmi ke taaruf ka link

  1. Ahmad Ali says:

    دیا گروپ کے تعارفی سلسلے میں آج محترم احمد علی برقی صاحب کا تعارف پیشِ خدمت ہے

    ۔۔

    ڈاکٹر احمد علی برقی اعظمی : ایک تعارف میں۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان کے اپنے الفاظ میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    میرا منظوم تعارف احمد علی برقی اعظمی
    پوچھتے ہیں مجھ سے وہ میرا تعارف کیا کہوں
    میرے والد برق تھے اور میں ہوں برقی اعظمی

    شہرِ اعظم گڈھ ہے یوں تو میرا آبائی وطن
    کھینچ لائی شہرِ دہلی میں زبانِ فارسی

    ریڈیو کے فارسی شعبے سے ہوں اب مُنسلک
    ضوفگن ہے برق سے برقی کے فن کی روشنی

    اردو کی ویب سائٹوں پر کرتا ہوں عرضِ ہُنر
    میرا فطری مشغلہ ہے چونکہ عصری آگہی

    میری خوئے بے نیازی ہے مجھے بیحد عزیز
    میرے ادبی ذوق کی مظہر ہے میری شاعری

    ہوتا میں بھی گر زمانہ ساز تو سب جانتے
    ہوں مقامی سطح پر اب تک شکارِ بے رُخی

    یوں تو ہوں اربابِ دانش میں سبھی سے روشناس
    مجھ کو شاید وہ سمجھتے ہیں ابھی تک مبتدی

    ہیں فصیلِ شہر سے باہر ہزاروں قدرداں
    باعثِ ذہنی سکوں ہے اُن سے میری دوستی

    میرے والد کا تصرف ہے مرا عرضِ ہُن
    ر ان کے فکر و فن کی ہے میرے سخن میں تازگی

    جملہ اصنافِ سخن سے یوں تو ہے مجھ کو لگاو
    ہے یہ یادِ رفتگاں وجہہِ نشاطِ معنوی

    پہلے موضوعاتی تھا عرضِ ہُنر کا دایرہ
    میری غزلوں میں بھی ہے جس سے تسلسل آج بھی

    نام گلہائے سخن کا ہے مرے روحِ سخن
    روح کو ہوتی ہے حاصل جس سے اک آسودگی

    شہر اعظم گڈھ ہے برقی یوں تو میری زادگاہ
    شہرِ دہلی میں بسر کرتا ہوں اب میں زندگیی

    احمد علی برقی اعظمی ۲۵ دسمبر ۱۹۵۴ کو شہر اعظم گڈھ یوپی کے محلہ بازبہادر میں پیدا ہوا۔
    میں درجہ پنجم تک مدرسہ اسلامیہ باغ میر پیٹو ، محلہ آصف گنج، شہر اعظم گڈہ کا طالبعلم رہا، بعدازآں شبلی ہائر سیکینڈری اسکول سے دسویں کلاس کا امتحان پاس کرنے کے بعدانٹرمیڈیٹ کلاس سے لے کر ایم اے اردو تک شبلی نیشنل کالج ، اعظم گڈھ کا طالبعلم رہا۔ میں نے ۱۹۶۹ میں ہائی اسکول، ۱۹۷۱ میں انٹرمیڈیٹ، ۱۹۷۳ میں بی اے اور ۱۹۷۵ میں ایم اے اردو کی سند حاصل کی اور شبلی کالج سے ہی ۶۷۹۱ میں بی ایڈ کیا۔ بعد ازآن مزید اعلیٰ تعلیم کے حصول کے لئے ۱۹۷۷ میں دہلی آکر جواہر لعل نہرو یونیورسٹی ،نئی دہلی میں ایم اے فارسی میں داخلہ لیااور یہاں سے ۱۹۷۹ میں ایم اے فارسی کی سند حاصل کی اور بعد ازآن جواہر لعل نہرو یونیورسٹی ہی سے پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی

    ۔ میرے والد کا نام رحمت الٰہی اور تخلص برق اعظمی تھا جو نائب رجسٹرار قانونگو کے عہدے پر فائز تھے۔میرے والد ایک صاحب طرز اور قادرالکلام استاد سخن تھے جنہیں جانشینِ دا غ حضرت نوح ناروی سے شرفِ تلمذ حاصل تھا۔میرے بچپن کا بیشتر حصہ والِد محترم کے سایہ عاطفت میں گذرا۔ مجھے کہیں آنے جانے کی اجازت نہیں تھی۔بیشتر وقت والد صاحب کے فیضِ صحبت میں گذرتا تھا جس سے میں نے بہت کچھ حاصل کیا اور آج میں جو کچھ ہوں انہیں کا علمی ،قلمی اور روحانی تصرف ہے۔میرا اصلی نام احمد علی اور تخلص والد کے تخلص برق کی مناسبت سے برقی اعظمی ہے۔والد صاحب کے فیضِ صحبت کی وجہ سے شعری اور ادبی ذوق کی نشوو نما بچپن میں ہوگئی تھی جو بفضلِ خدا اب تک جاری و ساری ہے۔والد صاحب کے ساتھ مقامی طرحی نشستوں میں با قایدگی سے شریک ہوتا رہتا تھااس وجہ سے تقریبا ۵۱ سال کی عمر سے طبع آزمائی کرنے لگا۔

    ادبی ذوق کا نقظہ آغاز والدِ محترم کا فیضِ صحبت رہا اور میں نے جو کچھ بھی حاصل کیا انھیں کا فیضانِ نظر اور روحانی تصرف ہے۔اصنافِ ادب میں غزل میری محبوب ترین صنفِ سخن ہے۔ غزل سے قطع نظرمجھے موضوعاتی نظمیں لکھنے کا۲۰۰۳ سے ۲۰۰۹ تک کافی شوق رہا اور میں نے اس عرصہ میں ماحولیات، سائنس، اورمختلف عالمی دنوں کی مناسبت سے بہت کچھ لکھا جو ۶ سال تک مسلسل ہر ماہ ایک مقامی میگزین ماہنامہ سائنس میں شایع ہوتا رہا اور اتنی نظمیں لکھ ڈالیں کی ایک مستقل شعری مجموعہ ہوسکتا ہے۔ اس کے علاوہ مجھے یاد رفتگاں سے خاصی دلچسپی ہے چنانچہ میں بیشتر شعرائ ادیبوں ، اور فنکاروں کے یومِ وفات اور یوم تولد کی مناسبت سے اکثر و بیشتر لکھتا رہتا ہوں ۔اس سلسلے میں نے حضرت امیر خسرو، ولی دکنی، میر، غالب، حالی، شبلی، سرسید۔احمد فراز،فیض،پروین شاکر، ناصر کاظمی۔ مظفر وارثی۔شہریار،بابائے اردو عبدالحق،ابن انشا، جگر،شکیل بدایونی،مجروح سلطانپوری،مہدی حسن۔ صادقین،مقبول فدا حسین،وغیرہ پر بہت سی موضوعاتی نظمیں لکھی ہیں جن کا بھی ایک مجموعہ مرتب ہو سکتا ہے۔

    میں عملی طور سے میڈیا سے وابستہ ہوں اور ۱۹۸۳ سے آل انڈیا ریڈیو کے شعبہ فارسی سے وابستہ ہوں اور فی الحال انچارج شعبہ فارسی ہوں ۔ فیض، ساحر، مجروح، جگر، حسرت،فانی، پروین شاکر، اور ناصر کاظمی وغیرہ میرے پسندیدہ شعرا ہیں ۔ادیبوں میں سرسید احمد خاں اور شبلی نعمانی سے بیحد لگاو ہے۔

    میں اردو ویب سائٹس اور فیس بک پر بہت فعال ہوں اور فیس بک پرمیری۴۰۰۰ سے زائد غزلیں او ر نظمیں البم کی شکل میں موجود ہیں ۔

    موجودہ دور میں ادب اپنی منزل کی طرف رواں دواں ہے اور اس کی توسیع اور ترویج کے امکانات روشن ہیں ۔معاصرانہ چشمک،اور گروہ بندی فروغ زبان و ادب کی راہ میں سدِ راہ ہیں ۔سود و زیاں سے بے نیاز ہوکراگر ادبی تخلیق کی جائے اور اس میں خلوص بھی کارفرما ہو توفروغِ ادب کے امکانات مزید روشن ہو سکتے ہیں

    ۔میں اپنی خوئے بے نیازی کی وجہ سے گوشہ نشین رہ کراپنے ادبی اور شعری ذوق کی تسکین کے لئے انٹرنیٹ اور دیگر وسائلِ ترسیل و ابلاغ کے وسیلے سے سرگرمِ عمل ہوں ۔ میں اردو کی بیشتر ویب سائٹس اور اور فیس بُک کے بیشمار فورمز سے وابستہ ہوں ۔مجھے خوشامدپسندی اور زمانہ سازی نہیں آتی اس لئے مقامی سطح پر غیر معروف ہوں ۔ ہوتا زمانہ ساز تو سب جانتے مجھے کیا خوئے بے نیازی ہے دیوانہ پن مرا ویب سائٹوں پہ لوگ ہیں خوش فہمی کے شکار نا آشنائے حال ہیں ہمسائے بھی مرے عرضِ حال ہوتے ہیں اُن کے نام پہ برپا مشاعرے معیار شعر اُن کی بَلا سے گِرے گِرے جن کا رسوخ ہے انہیں پہچانتے ہیں سب ہم دیکھتے ہی رہ گئے باہرکھڑے کھڑے جو ہیں زمانہ ساز وہ ہیں آج کامیاب اہلِ کمال گوشہ عُزلت میں ہیں پڑے زندہ تھے جب تو ان کو کوئی پوچھتا نہ تھا ہر دور میں ملیں گے بہت ایسے سر پھرے برقی ستم ظریفی حالات دیکھئے اب ان کے نام پر ہیں ادارے بڑے بڑے جیسا کہ میں نے پہلے عرض کیا غزل میری محبوب صنف سخن ہے ۔

    میرے اسلوبِ سخن پر غیر شعوری طور سے غزلِ مسلسل کا رنگ حاوی ہے ۔ گویا میری بیشترغزلوں میں جیسا کی بعض احباب نے اس کی طرف اشارہ کیاغزل کے قالب میں نظم یا مثنوی کا گمان ہوتا ہے جو بعض احباب کی نظر میں محبوب اور بعض لوگوں کے خیال میں معیوب ہے۔میرا شعورِ فکر و فن میرے ضمیر کی آواز ہے۔ میری غزلیں داخلی تجربات و مشاہدات کا وسیلہ اظہار ہونے کے ساتھ ساتھ بقول جناب ملکزادہ منظور احمد صاحب حدیثِ حُسن بھی ہیں اور حکایتِ روزگار بھی ۔میں جس ماحول کا پروردہ ہو ں میری شاعری اس کے نشیب و فراز اور ناہمواریوں اور اخلاقی اقدار کے زوال کی عکاس ہے۔میں جو کچھ اپنے اِرد گِرد دیکھتا یا محسوس کرتا ہوں اسے موضوعِ سخن بنانا اپنا اخلاقی اور سماجی فریضہ سمجھتا ہوں جس کے نتیجے میں میری بیشتر شعری تخلیقات اجتماعی شعور کی بازگشت کی آئینہ دار ہیں ۔میں کلاسیکی روایات کا پاسدار ہونے کے ساتھ ساتھ جدید عصری میلانات و رجحانات کو بھی موضوع سخن بنانے سے گریز نہیں کرتا۔حالاتِ حاضرہ کے تناظرمیں بیدار مغز سخنور اور قلمکارجس ذہنی کرب کا احساس کرتے ہیں ان کی تخلیقات میں شعوری یا غیر شعوری طور سے اس کا اظہار ایک فطری اور ناگزیر امر ہے۔ چنانچہ ہیں مرے اشعار عصری کرب کے آئینہ دار قلبِ مضطر ہے مرا سوزِ دروں سے بیقرار آپ پر ہوں گے اثر انداز جو بے اختیار میری غزلوں میں ملیں گے شعر ایسے بیشمار صفحہ قرطاس پر کرتا ہوں اس کو منتقل داستانِ زندگی ہے میری برقی دلفگار اردو زبان و ادب کی ترویج و اشاعت ہمارا قومی،ملی اور اخلاقی فریضہ ہے۔اس ضمن میں مقامی اور علاقائی سطح پر ہمارے شاعروں ،ادیبوں اور اربابِ فکر و نظر کی علمی و ادبی خدمات کی افادیت اپنی جگہ مسلم ہے۔لیکن اردو زبان و ادب کے بین الا قوامی سطح پر فروغ میں معیاری اردو ویب سائٹوں کے کارہائے نمایاں حلقہ اربابِ فکر و نظر میں جنہیں انٹرنٹ کی سہولت دستیاب ہے اظہر من الشمس ہیں ۔

    خاکسار کو سب سے پہلے انٹرنٹ کی دنیا میں متعارف کرانے میں جناب ستپال بھاٹیا کی ہندی ویب سائٹ آج کی غزل ڈاٹ بلاگ اسپاٹ داٹ کام نقشِ اول کا درجہ رکھتی ہے۔اسی سائٹ کی فہرست میں مجھے محترم سرور عالم راز سرور صاحب اور اُن کا نامِ نامی،ان کا معیاری کلام اور اُن کی سائٹ کا لنک نظر آیا اور اس طرح میں اُن کی شہرہ آفاق ویب سائٹ اردو انجمن ڈاٹ کام سے باقاعدہ روشناس ہوااور مجھے یہ کہنے میں ذرا بھی تامل نہیں ہے کہ میری انٹرنٹ کی دنیا میں باقاعدہ طور پر رسائی اور اربابِ فکرو نظر سے شناسائی کا نقطہ آغاز اردو انجمن داٹ کام ہے۔ سرور عالم راز سرور صاحب کا تبحرِ زبان و بیان اُن کی اصلاحِ سُخن سے ظاہرہے جس کا کوئی جواب نہیں ہے اور جو میرے لئے مشعلِ راہ ہے اور رہے گی۔ اردو انجمن کے بعد مجھ سے ناظمِ اردو جہاں محترمہ سارا جبین صاحبہ نے رجوع کیا اور یہ میرا دوسرا میدانِ عمل تھا، ہے اور انشا ئ اللہ ہمیشہ رہے گا۔میری غزلوں کا صوری و معنوی حُسن و جمال اُن کی مُخلصانہ ،دلکش اور سحر انگیزتزئین اور نقاشی کا مرہونِ منت ہے۔اُن کے اِس بارِ احساں سے میں کبھی سُبکدوش نہیں ہو سکتا۔ میرا تیسرا پڑاو اردو بندھن ڈاٹ کا رہا جہاں میں محترم سالم احمد باشوار صاحب کی شفقت سے بہرہ مند ہوا جنھوں نے میری حوصلہ افزائی کے لئے از راہِ لطف میری با ضابطہ ویب سائٹ بنا دی اور مستقل طور سے بے لوث دستبردِ زمانہ سے اُس کی نگہداشت فرما رہے ہیں ۔خدائے بزرگ و برتر اُنھیں اس کا اجرِ عظیم عطا فرمائے۔ اردو دنیا ڈاٹ نٹ میں میں محترم مظفر احمد مظفر صاحب سے بہت متاثر ہوں جنھوں نے میری غیر معمولی تشویق اور حوصلہ افزائی فرمائی اور ہمیشہ حوصلہ افزا منثور اور منظوم اظہارِ خیال سے نوازتے رہے۔ دستک کے بارہویں شمارے میں خاکسار کے فکرو فن پر اُن کا مبسوط تبصرہ اُن کی شفقت و محبت کا آئینہ دار ہے۔ میں محترمہ سنیتا وگ کی شامِ سُخن ڈاٹ کام جناب مہتاب قدر کی اردو گلبن ڈاٹ کام آبجو ڈاٹ کام اور کبھی کبھی اردو آرٹسٹ ڈاٹ کام پر بھی اپنی خامہ فرسائی کے نقوش ثبت کرتا رہتا ہوں

    ۔ مجھے بیرونِ ملک حلقہ اربابِ فکر و نظر میں متعارف کرانے میں محترم حسن چشتی صاحب مقیمِ شکاگو کا نہایت اہم رول رہا ہے۔میری لوحِ دل پر ثبت ان کی شفقت کے نقوش لازوال ہیں ۔اُن کی وساطت سے میں محترم سردار علی صاحب مقیمِ ٹورانٹو ،کناڈا اور اُن کی عالمگیر شہرت کی حامل شعر و سخن ڈاٹ کام سے روشناس ہوا جو مجھے مستقل اپنی شفقت سے نوازتے رہتے ہیں ۔ محترم اعجاز عبید صاحب کی نوازشوں کے لئے بھی میں ان کا صمیمِ قلب سے سپاسگذار ہوں جنھوں نے حال ہی میں از راہِ لطف برقی شعائیں کے نام سے میری کچھ موضوعاتی نظموں کو جو میرا خصوصی میدان عمل ہے برقی کتاب کی شکل میں زیورِ طبع سے آراستہ کیا ہے۔ خدائے بزرگ و برتر ان کی ادبی و علمی خدمات کوشرفِ قبولیت عطا فرمائے۔ جب میں نے فیس بُک سے رجوع کیا تو مجھے پتہ چلا کہ شیدائیانِ اردو کس طرح یہاں بھی اردو کے فروغ میں بقدرِ ظرف اپنے فکر و فن کے جوہر دکھا رہے ہیں اور یہاں بھی شمعِ اردو اپنی آب و تاب کے ساتھ ضو فگن ہے۔ فیس بُک کی وساطت سے میں اردو منزل اور صغیر احمد جعفری صاحب اور اردو کے فروغ میں اُن کی گرانقدر خدمات سے روشناس ہوا اور یہاں موجود احباب اور اُن کے دلپذیر کلام سے مستفید ہونے کا شرف حاصل ہو رہا ہے۔فیس بُک پر موجود مختلف ادبی گروہوں خصوصاََ اردو لٹریری فورم الف،انحراف، بزمِ امکان،اردو شاعری، محبت ، گلکاریاں اوردیاگروپ کی ہفتہ وار فی البدیہہ طرحی نشستوں میں طبع آزمائی نے بھی میرے شعور فکرو فن کو جلا بخشی جس کے لئے ان کا بھی ممنون ہوں ۔میرے محترم دوست مسلم سلیم جو اپنے ۲۲ بلاگس اور ویب سائٹٹس کے وسیلے سے اردو زبان و اب کی غیر معمولی خدمت انجام دے رہے ہیں کی برقی نوازی بھی میرے رخشِ قلم کے لئے مہمیز کا درجہ رکھتی ہے جن کی پیہم نوازشوں کے لئے صمیم قلب سے سپاسگذار ہوں اور اُن کے بارِ احساں سے کبھی سبکدوش نہیں ہو سکتا۔

    دیا ادبی اردو فورم کی برقی نوازی کے لئے منظوم اظہارِ تشکر

    احمد علی برقی اعظمی
    ہے دیا اک بزمِ اردو نامدار
    جس نے بخشا ہے مجھے عزو وقار

    جن کو اردو شاعری سے ہے لگاؤ
    اس کی بزم آرائیوں پر ہیں نثار

    فیس بُک پر ہے یہ اردو کی سفیر
    ہیں نشستیں اس کی لکش ہفتہ وار

    اس سے ہوتی ہے عروسِ فکر و فن
    گل بداماں، گُلبدن اور گُلعذار

    مجھ کو ہر فورم سے ہے فطری لاؤ
    آج اردو کے ہیں جو خدمتگذار

    ہے ’’ دیا‘‘ کو اس میں حاصل امتیاز
    باغِ اردو میں ہے جو مثلِ بہار

    میرے رخشِ فکر کی مہمیز ہے
    دوستوں کی داد و تحسیں اور پیار

    میں ہوں برق اعظمی اس بزم کا
    اس نوازش کے لئے منت گذار

    ان کے چند اشعار کا انتخاب کرنا بہت مشکل رہا ۔۔۔ میں پڑھنے والوں سے گزارش کروں گی کہ وہ اپنی رائے دیں ۔۔۔۔۔
    اسے بخش دے جو ہوئی خطا تری شان جل جلالہ
    ترے سامنے ہوں میں بے نوا تری شان جل جلالہ

    روشن ہے جس کے نور سے یہ ساری کائنات
    وہ حُسنِ دلنواز و دلآرا کہوں تجھے

    وجہہِ وجودِ عالمِ امکاں ہے تیری ذات
    بزمِ جہاں کا انجمن آرا کہوں تجھے

    تجھ سا نہیں جہاں میں کہیں کوئی غمگسار
    مجبر و غمزدوں کا سہارا کہوں تجھے

    ہے اور کون شافعِ محشر ترے سوا
    بخشش کا اپنی کیوں نہ وسیلہ کہوں تجھے

    چین سے جینے نہ دیں گے وہ انھیں بھی شب و روز
    تھے انھیں بارِ سماعت جو فسانے میرے

    اپنا اعزازِ عظمتِ رفتہ
    کھو گیا تھا جو، پالیا جائے
    نعمتِ حق کا شکر ہے واجب
    جو بھی ملتا ہے کھا لیا جائے

    چھلک نہ جائے مئے عشق چشمِ میگوں سے
    نظر اٹھاؤ اِدھر ساغر و سبو تو کرو

    نمازِ عشق ہے کرنی ادا جو مقتل میں
    تو پہلے خونِ جگر سے وہاں وضو تو کرو

    خمارِ خواب جب چَھٹا، مرا ضمیر جاگ اُٹھا
    ہوا جو خود سے آشنا، سراغ اپنا پا گیا

    منظوم اظہارتشکر بخضور ادیا ادبی فورم ( اس برقی نوازی کے لئے)
    احمد علی برقی اعظمی

    باعثِ عز و شرف ہے یہ دیا کا لطفِ خاص
    اس نوازش کے لئے ہوں اس کا میں منت گذار

    ہے یہ فورم فیس بک پر مرجعِ اہلِ نطر
    میرا یہ اعزاز ہے ، میرے لئے اک یادگار

    اس کی بزم آرائیاں ہوں سب کی منظورِ نظر
    اس پہ نازل ہو ہمیشہ رحمتِ پروردگار

    دیتی ہیں اہلِ سخن کو دعوتِ فکرو نظر
    اس کی یہ ادبی نشستیں فیس بُک پر ہفتہ وار

    اردو کی تروئج میں یہ مشغلہ ہے فالِ نیک
    کرتی ہے ماحول یہ عرضِِ ہُنر کا سازگار

    ہے تعارف کا یہ بیحد خوبصورت سلسلہ
    کرتا ہے جوہر جو اربابِ قلم کے آشکار

    گامزن اس کی بدولت ہے مرا رخشِ قلم
    ہے یہ برقی اعظمی اردو کی اک خدمتگذار

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s