Barqi Azmi on Hashim Ali Khan Hamdam

https://fbcdn-sphotos-h-a.akamaihd.net/hphotos-ak-xpa1/v/t34.0-12/10484821_10203423411259827_1498245608_n.jpg?oh=51a6a6c9e4b49cf963e3cf19d449468c&oe=53A17205&__gda__=1403054952_1fba8d0b3007f2b7eacfc771da693991دیا تعارفی سلسلے میں آج محترم ہاشم علی خان کا تعارف پیش خدمت ہے نام:۔ہاشم علی خان ہمدمؔ ولدیت:۔ زمر د خان تاریخ پیدائش:۔ 7 جولائی 1973 تعلیم:۔ایم اے اردو ، ایم اے انگریزی(پنجاب یونی ورسٹی لاہور) جائے پیدائش :۔ خودہ شریف تحصیل حسن ابدال جلع اٹک پیشہ:۔ درس و تدریس سرکاری ملازمت:۔ لیکچرار (اردو) ایف جی سر سید کالج راول پنڈی پیشہ ورانہ خدمات:۔ بطورتربیت کار اساتذہ اور ضلعی منتظم تربیت اساتذہ جدید نصاب تعلیم لاگو کرنے ،اساتذہ کی مسلسل پیشہ ورانہ تربیت ،جدید طریقہ ہائے تدریس ،اور جدید امتحانی نظام لاگو کرنے اور معیاری تعلیم کے فروغ میں اہم ذمہ داریاں نبھائیں اور نمایاں کردار ادا کیا۔ مشاغل:۔سماجی اور تعلیمی خدمات ،شاعری اور مطالعہ فیس بک پر مشاغل:۔ادبی گروپ ”موج ِسخن ”میں منتطم اور میزبان ہفتہ وارموج سخن عالمی فی البدیہہ طرحی مشاعرہ اور دیگر ادبی گروپس میں ادبی سرگرمیاں جن میں دیا گروپ نمایاں ہے۔ دیا گروپ سے وابستگی:۔ فیس بک پر پہلی خاتون دیا جیم (سعدیہ مبارکہ)ہیں جو دوستوں کی فہرست میں شامل ہوئیں ۔۔۔ دیا مشاعرہ کے اولین طرحی مشاعرہ سے تمام مشاعروں میں مسلسل شرکت کا اعزاز حاصل ہے۔ تصانیف:۔پانچواں موسم (زیر طبع) اصناف شاعری:۔ حمد ، نعت ،غزل ، نظم ، سلام ،منقبت، طنز و مزاح فی البدیہہ طرحی شاعری:۔ فیس بک پر 100 سے زائد فی البدیہہ طرحی غزلیں ٭میری کہانی میری زبانی٭ پہلی جماعت میں اردو کی پہلی کتاب معہ ہمدرد اضافی ایڈیشن پڑھنے کے بعد صوفی غلام مصطفٰے تبسم کی کتاب ”لال بجھکڑ ” پڑھی اور پانچویں جماعت پاس کرنے تک پرائمری سکول لائبریری میں موجود کم و بیش 150 کتب کا مطالعہ یو ں کیا کہ اپنے پیر استاد صاحب کی ”تعویزات و عملیات” اور” مردِ حق ”جیسی سیاسی کتاب بھی پڑھ لی۔ جو اس وقت سمجھ سے بالا تر تھیں۔کتب بینی کے شوق میں خوفناک کہانیوں کے زیر اثر خوف ناک بخارمیں بھی مبتلا ہونا پڑھا۔ بید کی کہانی اور حویلی کا راز ایسی ہی کتابیں تھیں جنہیں پڑھ کر خوف سے بخار ہو گیا۔ہائی سکول میں کتب بینی کی حوصلہ شکنی رہی اور اساتذہ سے سفارش کروا کر چند کتب پڑھیں ۔ کتاب تک نا رسائی نے اپنی ذاتی ڈائری بنانے کا شوق پیدا کیا اور یوں اخبارات اور بچوں کے رسائل سے اپنے پسندیدہ اشعاراکٹھے کرنے کا جنون پروان چڑھا جنہیں رنگ دار اور خوش خط لکھنا میرا پسندیدہ مشغلہ رہا۔ اسی دوران ادبی اور تفریحی سرگرمیوں میں خوب حصہ لیا ۔ کرکٹ کھیلنے کا جنون رہا ۔ ایسا کہ اپنے پاؤں میں آپریشن کے بعد چار ٹانکے لگے ہونے کے باوجود ایک کرکٹ میچ کھیلا ۔ میٹرک گورنمنٹ ہائر سیکنڈری سکول حسن ابدال سے کی ۔اسی دوران سکول دور کے ایک استاد جناب میاں محمد صاحب جو معروف شاعر پروفیسر رؤف امیر(مرحوم) کے بہنوئی اور عمدہ شاعر جناب عارف سیمابی کے والد گرامی ہیں کی حوصلہ افزائی سے تحت اللفظ میں شعر خوانی کا سلیقہ عطا ہوا ۔اور ادبی ذوق کو جلا ملی۔ کالج لائف نہایت خوشگوار رہی ۔گورنمنٹ کالج اٹک میں ایف ایس سی کے دوران اردو کے معروف استاد جناب پروفیسر انور جلال صاحب کی ساحرانہ شخصیت اور اندز تقریر اور شعر خوانی سے حقیقی ادبی ذوق پیدا ہوا اور تک بندی سے شاعری کا آغاز کیا ۔ پہلی غزل کا پہلا باقاعدہ شعر جومحفوظ ہے وہ یوں تھا۔ دل کا یہ در کھلا ہے در آئے کوئی کیسے خوابوں کے اس چمن کو مہکائے کوئی کیسے اسی دوران دوستوں نے تخلص ہمدمؔ تجویز کیا ۔گورنمنٹ ایلیمنٹری کالج راول پنڈی میں پروفیسر فریاد حسین ترمذی کی راہنمائی میں بیت بازی کے کئی مقابلے جیتے اور عروض کے بنیادی رموز سیکھے ۔ کالج میگزین میں پہلی مزاحیہ نظم شائع ہوئی۔اور نوائے وقت اور دیگر اخبارات میں غزلیں شائع ہونے پر روحانی خوشی حاصل ہوئی ۔اسی دوران ادبی دوستوں سے تعارف ہوا اور مضافات میں ہونے کی وجہ سے یہ ادبی قربت زیادہ تر خط و کتابت تک محدود رہی ۔ عملی زندگی کا آغاز سی بی سکول کامرہ کینٹ سے کیا۔تعلیم کا سلسلہ جاری رکھتے ہوئے 1998 میں بی اے ، 2000 میں ایم اے اردو ، 2002 میں بی ایڈ اور 2010 میں انگریزی ادب میں ایم اے کیا۔پیشہ ورانہ تعلیم بھی ساتھ ساتھ جاری رہی ۔ سکول ،کالج اور تربیت اساتذہ کے اداروں میں درس و تدریس کے فرائض بحسن و خوبی انجام دیے اور ابھی تک یہ سلسلہ جاری ہے۔ اٹک ،حسن ابدال ،واہ ،ٹیکسلا، راول پنڈی کی ادبی تنطیموں سے وابستگی رہی راکب محمود راجا بہترین شاعر دوست ہیں۔رانا سعید دوشی ،نوشیروان عادل، حفیظ اللہ بادل ،شمشیر حیدر ،سجاد بلوچ ،عزیز طارق ، زبیر قیصر ، علی آزر ،صدیق صابر ایاز ، وقار احمد آس ،مشتاق عاجز ، ارشد محمود ناشاد https://fbcdn-sphotos-h-a.akamaihd.net/hphotos-ak-xpf1/v/t34.0-12/10472959_10203423552903368_1517124561_n.jpg?oh=2db29db9ce1f58dbc8660b91965494b7&oe=53A13D98&__gda__=1403078281_e052fcf250b599d7d1ed7e69400f7f54،شاکر القادری ، شوکت محمود شوکت ،قیصر ابدالی، عمران عامی ،ڈاکٹر عزیز فیصل ،سید جاوید،نسیم شیخ ،دیا جیم ،،قدسیہ ظہور ، شازیہ اکبر اور اپنے کالج کے دوست جناب پروفیسر بلال سہیل ، پروفیسر مظہر اقبال کیف ، پروفیسر خورشید احمد اور پروفیسر خلیل الرحمٰن ابراہیمی صاحب سے ادبی رشتے محبتوں پر قائم ہیں ۔ یہ چند نام ہیں ورنہ یہ فہرست بہت طویل ہے جو فیس بک کے ناطے پوری دنیا تک محیط ہے۔میں اس ادب دوستی کو اپنے لیے اعزاز سمجھتا ہوں۔ میرے پسندیدہ شعرا میں میر ، غالب ،اقبال ،فیض ،فراز، ناصر ، محسن ، جون ایلیا اور پروین شاکر شامل ہیں۔ ادبی نظریہ:۔ نئے سروں کے ترنم میں بات کرتا ہوں مرے سخن کا حوالہ ہے پانچواں موسم ادب زندگی کا نمائند ہ ہونا چاہیے ۔جس میں زندگی کے تمام پہلو ؤں کا احاطہ اس انداز میں کیا جائے کہ ادبی فن پارہ اپنے تکنیکی ، فنی ، لسانی ،سماجی اور آفاقی کردار کو نبھاتے ہوئے دل میں اتر جائے ۔مثبت رویوں کا فروغ ادبی طرہء امتیاز ہونا چاہیے ۔مایوسی اور منفی سوچ سے پہلو تہی کرتے ہوئےاچھے اورخوب صورت لہجے میں پاکیزہ ، اعلٰی اور ارفع خیالات کا اظہاریہ ہی میرے نزدیک خوب صورت ادب ہے۔آفاقی محبت ،فطرت سے لگاؤ ، خلوص اورانسان دوستی ،امن اور اخوت کا پہلو ادب میں نمایاں رہنا چاہیے۔ دیا گروپ کےلیے دعا گو ہوں کہ ادب کے فروغ میں اس کی روشنی کبھی ماند نہ پڑے ۔ چند اشعار دوستوں کی نذر غزل کھلے ہیں پھول خوشبو کے بکھر جانے کا موسم ہے چلے آؤ کہ فصلِ گل بکھر جانے کا موسم ہے وفا کے موڑ پر جب بھی ترا نقش قدم دیکھا تری راہوں سے پوچھا ہے کدھر جانے کا موسم ہے مری آوارگی جب بھی ستاروں تک پہنچتی ہے میں اکثر بھول جاتا ہوں کہ گھرجانے موسم ہے مرے احساس میں گم کی سلگتی دھوپ ہے لیکن تری پلکوں کی چھاؤں میں ٹھہر جانے کا موسم ہے کئی دن سے مرے سپنے بھی گہری نیند سوئے ہیں یہی محسوس ہوتا ہے کہ مر جانے کا موسم ہے چلو پھر روٹھ جاتے ہیں کسی کی یاد سے ہم بھی شناساؤں سے بن بولے گزر جانے کا موسم ہے تری سلجھی ہوئی زلفیں یہی پیغام دیتی ہیں سدھر جاؤ مرے ہمدمؔ سنور جانے کا موسم ہے منتخب اشعار ٭ مرے شعور میں نفرت نہیں محبت ہے مرے خمیر نے پایا ہے پانچواں موسم ٭ بھیگی پلکوں کے سائے میں ٹوٹے سپنے کیا رکھنا کچا گھر ہے دیواروں پر کانچ کے ٹکڑے کیا رکھنا ٭ کوئی پودا نہ ترے قد کے برابر نکلا دل کی مٹی میں کئی بار شجر کاری کی ٭ چاندنی کی چادر سے دھوپ کی قباؤں تک میں نے تیری چاہت میں ہر لباس پہنا ہے ٭ تجھ کو سانسوں کے جھروکے میں بسا کر ہمدمؔ اپنے احساس کی خوشبو سے محبت کی ہے ٭ اتنی پہچان ہو گئی ہمدمؔ آئینہ بھی سنور کے دیکھا ہے ٭ اک ذرا سوچ کر مری سوہنی وقت موجِ چناب رکھتا ہے ٭ چاند چاند چہروں کے دائرے بھی زخمی ہیں پتھروں کی بستی میں آئینے بھی زخمی ہیں ٭ بدل بدل کے جلائے ہیں طاقچے میں دیے ہوا کی پیاس بجھے نہ بجھے مجھے کیا ہے ٭ عجیب رسمِ سخن ہے کہ جھوٹ ہی بولیں یہاں تو سچ بھی مذاقا” اگلنا پڑتا ہے ٭ بانٹ لیتا ہے اسے ظلم کا بندر آخر ایک روٹی جو مساوات میں رہ جاتی ہے ٭ جب سے کسی کنگن نے اسے زخم دیا ہے ہاتھوں میں کسی کے وہ کلائی نہیں دیتا ٭ سفید چاند پہ کھلتا ہوا ستارہ ہے ہری زمیں پہ خدا نے جسے اتارا ہے ٭ فیس بک پر کہے گئے چند فی البدیہہ اشعار ٭ کر رہے ہیں سبھی خود پہ ”گلکاریاں” ” ہاں کسی کی خودی آشکارا نہیں” ٭ روشنی کا دیا یوں ہی جلتا رہے رک نہ پائے کبھی شیخ جی کا سفر ٭ امن کے نام پر دشمنی کا سفر کتنا مہنگا پڑا آشتی کا سفر ٭ برگد کے کسی پیڑ کی چھاؤں میں کھڑا ہوں اک دھوپ سی پڑتی ہےمرے پاؤں میں آکر ٭ دوسرے رستے کا مجھ کو ہوش تک رہتا نہیں اک گلی رکھی ہوئی ہے آنے جانے کے لیے ٭ ہم اندھیرے کے تیر تھے ہمدم ہم نے دیکھا نہیں نشانے کو ٭ سرِ میزان کملی میں چھپا لیں گے غلاموں کو ہمیں معلوم ہے ہمدم مقامِ مصطفٰےکیا ہے ٭ غموں کی ریز گاری نے ہمارا مان توڑا ہے اگر ہم سنگ دل ہوتے تو تڑوانے کہاں جاتے ٭ بتا دیا ہے زمانے کو پھر قلندر نے خدا ملا ہے فقط بوریا نشینوں کو ٭ چند جگنو مرے آنگن میں اتر آئے ہیں کاش کوئی مرے بچپن کا زمانہ لا دے ٭ گنجینہ ء معنی کو محسوس کروں ہمدم پہلے دل ِ بینا دے ، پھر ذوق ِ تمنا دے ٭ میں اس لیے بھی سنورتا نہیں کبھی ہمدم کہ آئنہ مجھے دیکھے نہ ہر کسی کی طرح ٭ ان اندھیروں سے جنگ لازم ہے میرے ہمدمدیا جلاؤ کبھی ٭ عجیب چشمِ تما شا میں رنگ لائےگا جو آئنہ میری صورت مجھے دکھائے گا ٭ (موج سخن کا پہلا شعرکہنے کا اعزاز حاصل کیا) صدائے کن فکاں ہم سے نہ پوچھو محبت کی اذاں ہم سے نہ پوچھو درون ِ دل اٹھی موجِ سخن ہے محبت کی زباں ہم سے نہ پوچھو ٭ اچھا ہے تو کردار نبھانے کے لیے آ اک بار محبت کے فسانے کے لیے آ ٭ رونقِ بزمِ قلم ، موجِ سخن جانے گئے حرف ریزے پھول کی خوشبو سے پہچانے گئے ٭ حلقہء موجِ سخن میں بھی دیا جلتا ہے فی البدیہہ شعر سنانے کا ہنر تو دیکھو ٭ چھین لیتا ہے خدا ان سے جہانِ دانش جو سخن بیچ کے دربار سے لگ جاتے ہیں ٭ میرے حروف نعت کے سانچے میں خام ہیں تو ہی بتا حبیبؐ میں کیسا کہوں تجھے ٭ میرے حصے کی گھڑی اور کہیں ہے ہمدمؔ کون چوری کیے جاتا ہے زمانے میرے ٭ ہمدم کفِ شعور پر لکھی ہوئی ہے نعت بہرِ کرم حضورؐ نے بخشا ہنر کہیں ٭ آئینے سے یہ پہلی ملاقات ہے خود کو پہچان لوں تو بڑی بات ہے ٭ کون کہتا ہے غزل میرؔ سے بہتر ہمدمؔ میرؔ در میرؔ سخن اور بھی ویسا نکلا ٭ دورِ خزاں میں نغمہء فصلِ بہار ہے موج سخن پہ شعر کا دار و مدار ہے ٭ آئینے سے کلام رہنے دے چھوڑ اپنا مقام رہنے دے ٭ اک المیہ ہے آج کل معیارِ زندگی سستا ہوا ہے خون گرانی کے باوجود ٭ بنا ہے عکس مگر آئینے سے باہر ہے مرا وجود مرے دائرے سے باہر ہے ٭ مری حدودِ نظر بھی خرید لی گئی ہے سو آسماں بھی مرے طاقچے سے باہر ہے ٭ آئینہء جہان سے باہر نہ جاسکے یا رب ترے وجود کی وسعت نہ پا سکے ٭ ”خود کلامی” مجھے ”صد برگ ” سے ” انکار ” نہیں تیری ” خوش بو ” مرے اطراف بکھر جائے گی ٭ ہم ایک عمر سے ہنگامہء حیات میں ہیں عجب سکوت پڑے گا اگر گئے چپ چاپ ٭ بچوں نے اپنی بھوک کو یوں بھی بھلا دیا روٹی چھنی تو ہاتھ میں فٹ بال آ گئے ٭ رنگوں کے امتزاج کا پیکر لگا ہمیں تو ساری کائنات کا محور لگا ہمیں ٭ میں خواب اجالوں کی روش ڈھونڈ رہا ہوں دل اگلا قدم چاند پہ دھرنے نہیں دیتا ٭ آئینہ زاد مری شکل لیے پھرتے ہیں عکس در عکس مری چشمِ تما شا لے کر ٭ زندگی پھر تری قربت کا نشہ مانگتی ہے سرد ماتھے پہ سلگتا ہوا بوسہ دینا ٭ اف ! پری زاد کی سیہ پوشی رنگ گورا لباس کالا ہے ٭ کہنے کو خاک زاد ہوں لیکن فلک پہ ہوں سرحد مرے شعور کی ہمدمؔ کدھر نہیں ٭ حلقہ ء موج سخن آباد کر ہم نوا اہلِ ادب کو یاد کر ٭ طاق در طاق محبت کا دیا رکھا ہے آئینہ خواب کی صورت میں سجا رکھا ہے ٭ سازشیں پلتی رہی ہیں سایہء دیوار میں کیوں امیرِ شہر نے حالات کو جانچا نہیں ٭ یہی تو موجِ غزل ہے ہمدمؔ صریرِ خامہ پہ خواب رکھنا ٭ دشتِ وہم و گماں میں رہتا ہے دل عجب خاکداں میں رہتا ہے ٭ عہدِ وفا میں جان سے جانے کے باوجود کتنا عظیم شخص تھا نعرہ بنا رہا ٭ قبریں بنانے لگ گئے اینٹیں چرا کے لوگ ‘ ‘دیوار گررہی ہے ہمارے مکان کی” ٭ کربلا کے اسیر ہیں ہمدمؔ ہم بھی سینہ سپر ہیں تیروں میں ٭ مصرعہء تر میں غزل زاد فغاں ٹھہرے گی رونقِ موجِ سخن اردو زباں ٹھہرے گی ٭ کھلکھلاتا ، مسکراتا، جھومتا اچھا لگا عمر کے پہلے برس پر وہ بڑا اچھا لگا ٭ اپنے اندر جھانکنے کا سلسلہ اچھا لگا عمر بھر پیشِ نظر اک آئینہ اچھا لگا ٭ اوج پر شاعری کا مزا لے گئی دل تو موج سخن کی فضا لے گئی ٭ دہشت پذیر شہر میں قحط الرجال ہے ہر ذی شعور مست ہے کس کارو بار میں ٭ غزل کہنے لگے دل کی فغاں سے محبت ہو گئی اردو زباں سے ٭ کس کی انا خریدنے جائیں گے ساہو کار کھیتوں میں جب اناج اگایا نہ جائے گا ٭ اسکول کے کچے آنگن میں اک اور ملالہ زندہ ہو تہذیب کے دشمن کب ایسے حالات گوارا کرتے ہیں ٭ صدائے موجِ سخن میں یہ حرفِ تر کیا ہے حدیثِ چشمِ تماشا ہے مختصر کیا ہے

Advertisements

About Muslim Saleem

Muslim Saleem (born 1950) is a great Urdu poet, writer and journalist and creator of massive directories of Urdu poets and writers on different blogs. These directories include 1. Urdu poets and writers of India part-1 2. . Urdu poets and writers of India part-II 3. Urdu poets and writers of World part-I 4. Urdu poets and writers of World part-II, 5. Urdu poets and writers of Madhya Pradesh, 6. Urdu poets and writers of Allahabad, 7. Urdu poets and writers of Shajahanpur, 8. Urdu poets and writers of Jammu-Kashmir and Kashmiri Origin, 9. Urdu poets and writers of Hyderabad, 10. Urdu poets and writers of Augrangabad, 11. Urdu poets and writers of Maharashtra 12. Urdu poets and writers of Tamil Nadu, 13, Urdu poets and writers of Karnataka 14. Urdu poets and writers of Gujarat, 15. Urdu poets and writers of Uttar Pradesh, 16. Urdu poets and writers of Canada, 17. Urdu poets and writers of Burhanpur, 18. Urdu poets and writers of West Bengal 19. Female Urdu poets and writers, 20. Hindu Naatgo Shuara etc. These directories can be seen on :- 1. www.khojkhabarnews.com 2, www.muslimsaleem.wordpress.com 3. www.urdunewsblog.wordpress.com, 4. www.khojkhabarnews.wordpress.com. 5. www.poetswritersofurdu.blogspot.in 6 www.muslimsaleem.blogspot.in 7. www.saleemwahid.blogspot.in (Life) Muslim Saleem was born in 1950 at Shahabad, Hardoi, Uttar Pradesh in India, brought up in Aligarh, and educated at Aligarh Muslim University. He is the son of the well-known Urdu poet Saleem Wahid Saleem. He has lived in Bhopal, India since 1979. (Education): Muslim Saleem studied right from class 1 to BA honours in AMU schools and University. He completed his primary education from AMU Primary School, Qazi Para Aligarh (Now converted into a girls school of AMU). He passed high school exam from AMU City School, Aligarh and B.A. Hons (Political Science) from Aligarh Muslim University Aligarh. Later, Muslim Saleem did M.A. in Arabic from Allahabad University during his stay in Allahabad. (Career) Muslim Saleem began his career as a journalist in the Urdu-language newspaper Aftab-e-Jadeed, Bhopal. He is multilingual journalist having worked on top posts with Dainik Bhaskar (Hindi), Central Chronicle (English), National Mail (English), News Express (English) and most recently as the chief copy editor of the Hindustan Times in Bhopal. At present, Muslim Saleem is English news advisor to Directorate of Public Relations, Government of Madhya Pradesh. (as on December 1, 2012). (Works and awards) Muslim Saleem has been appointed as Patron of Indo-Kuwait Friendship Society. He is the author of Aamad Aamad, a compilation of his poetry published by Madhya Pradesh Urdu Academi. Several of his couplets are well known in the Urdu language. He won the Yaad-e-Basit Tarhi Mushaira, a poetry competition, in 1982. In 1971, Muslim Saleem was awarded by Ismat Chughtai for his Afsana “Nangi Sadak Par” at AMU Aligarh. His ghazals and short stories have been published in Urdu-language publications Shair, Ahang, Asri, Adab, Agai, Naya Daur, Sada-e-Urdu, Nadeem and other periodicals and magazines. His work in service of the Urdu language was recognized in a special 2011 edition of the periodical Abadi Kiran, devoted to his work. Evenings in his honour have been organised in a number of cities. Muslim Saleem is currently compiling a massive database of poets and writers of the Urdu language, both historic and currently active. (Translation of Muslim Saleem’s work in English): Great scholar Dr. Shehzad Rizvi based in Washington has translated Muslim Saleem’s ghazal in English even though they have never met. Dr. Rizvi saw Muslim Saleem’s ghazals on websites and was so moved that he decided to translate them. (Praise by poets and writers) Great poet and scholar of Urdu and Persian Dr. Ahmad Ali Barqi Azmi has also written a number of poetic tributes to Muslim Saleem. Dr. Azmi and Muslim Saleem are yet to meet face to face. Beside this, great short-story writer and critic Mehdi Jafar (Allahabad, Bashir Badr (Bhopal), Jafar Askari (Lucknow), Prof. Noorul Husnain (Aurangabad), Kazim Jaffrey (Lahore) and a host of others have written in-depth articles defining Muslim Saleem’s poetry. (Muslim Saleem on other websites) Muslim Saleem’s life and works have been mentioned on Wikipedia, www.urduadab4u.blogspot.in, www.urduyouthforum.org and several other website. In fact, www.urduyouthforum.org has given credit to Muslim Saleem for lifting a number of pictures and entries from Muslim Saleem’s websites and blogs. (Address): Muslim Saleem, 280 Khanugaon, VIP Road, Bhopal-462001 Mobiles: 0 9009217456 0 9893611323 Email: muslimsaleem@rediffmail.com saleemmuslim@yahoo.com Best couplets: Zindagi ki tarah bikhar jaayen…… kyun ham aise jiyen ki mar jaayen kar di meeras waarison ke sipurd…. zindagi kis ke naam mar jaayen rooh ke karb ka kuchh mudaawa no tha doctor neend ki goiyan likh gaya wo dekhne mein ab bhi tanawar darakht hai haalanke waqt khod chuka hai jaden tamam My Facebook url is http://en-gb.facebook.com/pages/Muslim-Saleem/176636315722664#!/pages/Muslim-Saleem/176636315722664?sk=info Other blogs http://urdupoetswriters.blogspot.com/ http://muslimspoetry.blogspot.com/ http://abdulahadfarhan.blogspot.com/ http://ataullahfaizan.blogspot.com/ http://hamaramp.blogspot.com/ http://madhyanews.blogspot.com/ http://cimirror.blogspot.com/
This entry was posted in Uncategorized. Bookmark the permalink.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s